* آخرت کی زندگی کو ترجیح دیں

آخرت کی زندگی کو ترجیح دیں


سوره نمبر ٦، الانعام ، آیت نمبر ٣٢ 

 

وَمَا الْحَيَاةُ الدُّنْيَا إِلاَّ لَعِبٌ وَلَهْوٌ وَلَلدَّارُ الآخِرَةُ خَيْرٌ لِّلَّذِينَ يَتَّقُونَ أَفَلاَ تَعْقِلُونَ


ترجمہ :


دنیا کی زندگی تو کھیل اور تماشہ ہے حقیقت میں آخرت کا مقام  ان لوگوں کے لئے بہتر ہے جو الله کی نا فرمانی سے ڈرتے ہیں کیا تم لوگ عقل سے کام نہیں لوگے


سوره نمبر ، ٣، العمران   آیت نمبر ١٤ 


 زُيِّنَ لِلنَّاسِ حُبُّ الشَّهَوَاتِ مِنَ النِّسَاء وَالْبَنِينَ وَالْقَنَاطِيرِ الْمُقَنطَرَةِ مِنَ الذَّهَبِ وَالْفِضَّةِ وَالْخَيْلِ الْمُسَوَّمَةِ وَالأَنْعَامِ وَالْحَرْثِ ذَلِكَ مَتَاعُ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَاللّهُ عِندَهُ حُسْنُ الْمَآبِ

 

ترجمہ :

 

لوگوں کے لئے ان کی خواہشوں کی چیزیں یعنی عورتیں، اولاد، سونے چاندی کے ڈھیر، نشان لگے ہوئے گھوڑے ، مویشی اور کھیتی جو بڑی زینت دار بنائی گئی ہیں  مگر یہ سب چند روزہ زندگی کے سامان ہیں حقیقت میں جو بہتر ٹھکانا ہے وہ الله کے پاس ہے

 


سوره نمبر ١١، ھود ،آیت نمبر ١٥ اور ١٦

 

مَن كَانَ يُرِيدُ الْحَيَاةَ الدُّنْيَا وَزِينَتَهَا نُوَفِّ إِلَيْهِمْ أَعْمَالَهُمْ فِيهَا وَهُمْ فِيهَا لاَ يُبْخَسُونَo

أُوْلَـئِكَ الَّذِينَ لَيْسَ لَهُمْ فِي الآخِرَةِ إِلاَّ النَّارُ وَحَبِطَ مَا صَنَعُواْ فِيهَا وَبَاطِلٌ مَّا كَانُواْ يَعْمَلُونَo

ترجمہ : 


جو لوگ دنیا کی زندگی اور اس کی زیب و زینت کے طالب ہوتے ہیں انکے اعمال کا بدلہ ہم ان کو یہیں دے دیتے ہیں اور اس میں کوئی کمی نہیں کی جاتی ہے مگر آخرت میں ان کے لئے آگ کے سوا کچھ نہیں ہے  جو کچھ انہوں نے دنیا میں بنایا وہ برباد ہے اور سارا کیا دھرا باطل ہے

 

سوره نمبر ٥٩، الحشر ، آیت نمبر  ١٨


يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّهَ وَلْتَنظُرْ نَفْسٌ مَّا قَدَّمَتْ لِغَدٍ وَاتَّقُوا اللَّهَ إِنَّ اللَّهَ خَبِيرٌ بِمَا تَعْمَلُونَo

ترجمہ :

 

اے ایمان والوں !  الله سے ڈرتے رہو اور ہر شخص یہ دیکھنا چاہئے کہ اس نے کل کے لئے کیا سامان بھیجا ہے الله سے ڈرتے رہو بیشک الله تمھارے سب اعمال سے با خبر ہے جو تم کرتے ہو

 

سوره نمبر ٧٩، النازعت ، آیت نمبر ٣٧ سے ٣٩

 

فَأَمَّا مَن طَغَىoوَآثَرَالْحَيَاةَ الدُّنْيَاo

فَإِنَّ الْجَحِيمَ هِيَ الْمَأْوَىo

 ترجمہ :

اور جس نے سرکشی کی تھی اور دنیا کی زندگی کو ترجیح دی تھی -حقیقت میں !  دوزخ ہی اسکا ٹھکانا ہوگی

 

سوره نمبر ٨٧، العا لی ، آیت نمبر ١٦ سے ١٩ 

 

بَلْ تُؤْثِرُونَالْحَيَاةَ الدُّنْيَاo

وَالْآخِرَةُ خَيْرٌ وَأَبْقَىo

إِنَّ هَذَا لَفِيالصُّحُفِ الْأُولَىo

صُحُفِ إِبْرَاهِيمَ وَمُوسَىo

ترجمہ :



تم دنیا کی زندگی کو ترجیح دیتے ہو ، جبکہ آخرت کی زندگی بہتر ہے اور ہمیشہ رہنے والی ہے یہ بات ہم نے پہلے آئی ہوئی  کتابوں میں کہہ دی تھی اور ابراہیم اور موسی کے صحیفوں میں بھی فرمائی ہے  




 

  تبصرہ :

عام طور پر لوگ  اس دنیا میں اپنی زندگی میں مصروف رہتے ہیں انکا مقصد ہوتا ہے کہ دولت کو جمع کر کے عیش و آرام کی زندگی بسر کریں

 . وہ ہمیشہ کوششیں کرتے ہیں کہ بڑے گھروں کی تعمیر کے ذریعے عیش و آرام کی سہولت اپنی اولاد کے لئے  فراہم کریں ، واضح طور پر 

 مطلب ہے کہ لوگ اس دنیا کی زندگی کو  پوری اہمیت  دیتے  ہیں اور ان کو اس بات کا  کوئی خوف  نہیں ہوتا   کہ ایک دن انہیں اس 

دنیا سے رخصت ہونا ہے ان کو اس بات کا  احساس نہیں ہوتا کہ  ہر چیز جو  یہاں حاصل ہوئی ہے وہ سب یہیں رہ جائے گی - اگرچہ

 الله اور اس کے رسول (ص) نے بار بار یہ  فرمایا ہے  کہ لوگوں کو قیامت کے دن پر اور آخرت میں ہمیشہ رہنے والی زندگی پر   یقین رکھنا 

چاہئے. آخرت میں  ایک بہتر زندگی حاصل کرنے کے لئے  رسول الله  صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے قرآن کریم میں الله  کی طرف سے جو 

ہدایتیں  دی گئی ہیں ان پر سختی سے عمل کیا اپنے  پیروکاروں سےبھی  کہا کہ وہ اسی نظام کی پیروی کریں  اور آخرت میں کامیاب ہوں  

اللہ نے آخرت  والی زندگی کے بارے میں نہ صرف ابراہیم اور موسی کے صحیفوں میں تصدیق کی ہے  بلکہ پہلے نازل کی گئی  کتابوں میں 

بھی آخرت کی زندگی کے بارے میں بتایا ہے الله نے فرمایا ہے کہ ہم نے اپنے  پیغمبروں کو دنیا  کے ہر ملک میں بھیجا ہے حقیقت میں  

 جب یہ صحیفہ  نازل ہوئے تھے تو ان دنوں تحریر ، تحریر نویس اور  تحریری مواد دستیاب نہیں تھا . لہذا وحی کے الفاظ  منہ زبانی منتقل

 کئے گئے کتابی شکل نہ ہونے سے  پیغام کا عملی پہلو بدل گیا . الله کا اصل پیغام بدل دیا گیا اور عبادت کا طریقہ کے ساتھ انسان نے 

اپنے ایجاد کے ہوئے معبود بنا لئے – مرنے کے بعد دوبارہ پیدا  ہونے پر  اور  قیامت اور آخرت والی زندگی پر سے یقین ختم ہو گیا  .

 قرآن نازل ہوا تو اسے مختلف قسم کے مواد پر لکھا گیا. چونکہ اللہ نے اس بات کی ضمانت دی ہے کہ وہ قرآن کی پوری طرح حفاظت 

کرے گا ، لہذا آج قرآن کے حافظوں کے علاوہ قارئین کو دنیا بھر میں قرآن کی صحیح نقلیں مل سکتی ہیں. آج  قرآن لفظ بلفظ  اسی حالت

 میں موجود  ہے  جیسا قرآن کریم محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم پر  نازل ہوا تھا . یہ بڑی بد قسمتی ہے کہ قرآن کے موجود ہونے کے باوجود 

پیروکاروں نے اپنے آپ کو  مختلف حصوں میں تقسیم کر لیا ہے  پیروکاروں نے مقدس کتاب کو  ایک طرف رکھ دیا  اور خود کے ایجاد کے 

ہوئے طریقوں کو اپنا لیا  اور ان کی پیروی شروع کر دی  انہیں یہ سمجھنا چاہئے کہ قرآن کریم  زندگی کا مکمل نظام فراہم کرتا ہے اور اس 

کے ذریئے ہر شخص آخرت میں عیش و آرام کی زندگی حاصل کرسکتا ہے. یہ بات اچھی طرح سمجھ لیں کہ جو احکامات اس مقدس کتاب 

میں دئیے گئے ہیں ان میں کسی قیمت پر اختلاف نہیں ہو سکتا اور کسی شخص کو اس میں اپنی ذاتی راۓ دینے کا  اختیار نہیں بنتا – 

اس لئے یہ نا ممکن ہے کہ ہماری قوم فرقوں میں  بٹ جاۓ  




Comments