* پہلے کتاب والوں کے لئے حکم


 پہلے کتاب  والے لوگوں کے لئے  حکم

 

سورہ نمبر ٤ ، آیت نمبر ٤٧

  

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ أُوتُوا الْكِتَابَ آَمِنُوا بِمَا نَزَّلْنَا مُصَدِّقًا لِمَا مَعَكُمْ مِنْ قَبْلِ أَنْ نَطْمِسَ وُجُوهًا فَنَرُدَّهَا عَلَى أَدْبَارِهَا أَوْ نَلْعَنَهُمْ كَمَا لَعَنَّا أَصْحَابَ السَّبْتِ وَكَانَ أَمْرُ اللَّهِ مَفْعُولًا


ترجمہ  

 

اے  وہ لوگوں جنہیں  پہلے کتاب دی گئی تھی  مان  لو اب  اس  کتاب  کو جو  ہم نے اب نازل کی ہے  اور جو ان کتابوں کی تصدیق و  تائید  کرتی ہے جو پہلے سے تمھارے پاس موجود تھی  اس پر  ایمان لے آؤ  قبل اس کے کہ ہم چہرے  بگاڑھ کر پیچھے   کردیں  یا ان کو اسی طرح لعنت  زدہ  کر دیں  جس طرح سے ہم نے سبت والوں کے ساتھ کیا تھا  اور یاد رکھو کہ الله کا حکم  نازل  ہو  کر رہتا ہے

 

تبصرہ

 سبت کا دن، جس کا مطلب ہے ہفتہ کا دن ، اسرائیلیوں کو  ہفتہ   کا  دن چٹھی کا  دن  قرار دیا گیا تھا. اللہ نے سبت کا دن اس کے اور اسرائیلیوں کے درمیان دائمی عہد  قرار دیا تھا . وہ  یہ تھا  کہ اسرائیلی  اس دن صرف  عبادت اور آرام کریں گے  . اسرائیلیوں کو سبت کے دن سختی  رکھنے کی ضرورت تھی جس کا مقصد یہ ہے کہ وہ کسی بھی عالمی سرگرمی میں ملوث نہ  ہوں  اور نہ  کھانا پکانا کریں . اس سلسلے میں، اتنی سختی تھی کہ سبت کے دن کی خلاف ورزی کرنے پر  موت  کی سزا دی جائے. جب مذہبی اور اخلاقی چیزوں میں کمی آئی، تو انہوں نے سبت کے دن کی  کھلی بے حرمتی شروع کردی

 اتنا ہی نہیں   انہوں  نے  شہروں میں زیور کے  کاروبار اور  دن کی روشنی میں تجارت  بھی شروع کردی تھیں  - براہ کرم  یاد  رکھیں کہ الله نے مختلف طریقوں  سے اپنے بندوں کا امتحان لیا ہے  جب بھی  کوئی بندہ  یا  کوئی  گروہ  الله سے دوری اختیار کرتا ہے یا  نافرمانی کرتاہے  تو الله ان کو کئی  موا قع  فراہم کرتا ہے  پھر انکو لمبی چھوٹ دینے کے بعد سزا دی جاتی ہے جس طرح یہ  واقعہ قرآن مجید میں بیان کیا گیا ہے  اس سے اندازہ  لگایا گیا ہے کہ کچھ گنہگار افراد میں جسمانی تبدیلی آ گئی تھی  اور وہ بندربنا  دئیے گئے تھے   شاید  انکی دماغی حالت کو برقرار رکھا گیا ہو – زیادہ تر علماء اس جگہ کو  بندرگاہ  ایلیٹ  کے نام سے شناخت کرتے ہیں  ( یہ اردن کی بندرگاہ    اقابہ   کے قریب ہے )  جس کی تعمیر  اسرئیل کی موجودہ  ریاست نے کی ہے حضرت سلیمان نے  بحر احمر   کی اس بندرگاہ کو اپنے بیڑے کی خاص بندرگاہ بنایا تھا   









Comments