89. جنازے کی تیّاری، نمازے جنازہ اور دفنانا


                  

  ہر نفس کو موت کا مزہ چکھنا ہے     كُلُّ نَفْسٍ ذَآئِقَةُ الْمَوْتِ

  جنازے کی تیّاری ،  نماز جنازہ  اور دفنانا

جنازہ

 مسلمان  میت  کے زندہ مسلمانوں پر حقوق  

 حقیقت ہے کہ دنیا میں ہر شخص کو موت کا مزہ چکھنا ہے یہ بھی جان لیں کہ ایک مسلمان میت  کے زندہ مسلمانوں پر چار  حقوق ہیں – پہلا حق میت کو غسل دینا،  دوسرا حق اسکو کفن پہنانا ، تیسرا حق جنازے کی نماز ادا کرنا  اور چوتھا حق اسکو دفنانا – اس کے علاوہ کسی ایسے شخص کا کوئی حق نہیں جس نے مذہب اسلام چھوڑ دیا ہو   

جنازے کو تیّار کرنے کا طریقہ

·     انتقال ہونے پر  غسل سے پہلے اور غسل کے بعد میت  کا سر   حیی الصلاح  کی طرف  اور پیر   حیی   الالفلاح  کی طرف رکھے جائیں

·    میت  کو غسل دینا ( صرف غزوہ احد میں شہیدوں کو غسل نہیں دیا گیا تھا   )

·     میت کو کفن پہنانا

·     نماز جنازہ ادا کرنا

·     دفنانے میں میت کا چہرہ قبلہ رخ کرنا

·     میت کو دفنانا

میت کے غسل کا طریقہ  

میت کو غسل دینا فرض کفایہ ہے اگر میت کو غسل نہ دیا گیا تو سارے لوگ گنہگار ہونگیںآدمی کو غسل آدمی ہی دیں اور عورت کا غسل عورتیں ہی کریں ، لیکن چھوٹے  بچے کو غسل آدمی یا عورت دے سکتی ہے ،  ضرورت پڑھنے پر  شوہر اپنی بیوی کو یا بیوی شوہر کو غسل دے سکتی ہے عام طور پر  غسل دینے کے لئے تین لوگوں کی ضرورت ہوتی ہے

·     میت کو غسل گھر کے لوگ دیں اور  غسل کے طریقہ جاننے والے کو ساتھ رکھیں  

·     غسل  بسم الله  کہ  کر  شروع  کریں 

·      میت کو اونچے ٹیبل یا تختے پر رکھ کر غسل دیں

·     میت کے کپڑے اتار تے وقت مرد کی  ستر کو   ساڑے تین فٹ لمبے  کپڑے سے  اور خاتون کو  پانچ فٹ لمبے  کپڑے سے  سینے سے گھٹنوں کے نیچے  تک  ڈھاک   دیں

·     غسل دینے کے لئے دستانوں کا استمعال کریں

·       صاف گرم  پانی کا استمعال کریں 

·     میت کو وضو کرائیں،   دانت اور ناک صاف کریں

·     جسم کو تین بار پانی ڈال کر دھوئیں اگر جسم صاف نہ ہو پاۓ تو پانچ یا سات مرتبہ دھو سکتے ہیں  ہر بار جسم کو دائیں  طرف کرکے اور پھر    بایئں    طرف کرکے دھوئیں

·      

·     پہلا اور دوسرا غسل پانی اور صابن کے ساتھ اور تیسرا غسل صرف  پانی  سے دیا جاۓ

·     غسل کے بعد پیٹ کو دبائیں  تاکہ گندگی نکل جاۓ

·     اگر گندگی نکلے تو صاف کر لیں اور دوبارہ غسل نہ دیں  

·     بالوں کو دھو لیں  اور عورتوں کے لئے بالوں کو دھو کر   کھلا چھوڑ کر  کندھے کے دونوں طرف پھیلا دیں   

·     جسم کو صاف کپڑے یا تولیے سے سکھالیں

·         سر  ، پیشانی  ، ناک، ہاتھ ،  گھٹنوں ،  آنکھوں ،  پیروں  اور پنجوں پر   عطر  لگا دیں  اور کافور کو جوڑوں پر لگادیں  

·     مرد کے لئے  ستر  کو   سوکھے کپڑے   یا تولیہ سے اور عورتوں کے لئے سینےسے گھٹنوں کے نیچے  تک سوکھا  کپڑا ڈال رکھیں     

·     جن لوگوں نے غسل دیا ہے  بہتر ہوگا کہ کفنانے کے بعد   خود  نہا لیں اور دوسرے صاف  کپڑے  پہن لیں

کفنانا

·     آدمیوں کے لئے  ریشم کے کفن کی ممانعت ہے

·     کوشش کریں کہ کفن سفید رنگ کا ہو اور صاف ستھرا ہو

·     کفن کو عطر لگالیں

·      مرد  کے لئے تین کپڑے اور خاتون کے لئے پانچ  کپڑے    لینا ہوگا

·     کفن کے کپڑے کی چوڑائی ڈیڑھ میٹر کی  ہو

  مرد کے لئے کفنانے کا طریقہ

·     آٹھ آٹھ  فٹ لمبے  دو  کپڑے ایک کے اوپر ایک رکھ کر   نیچے بچھادیں  سب سے نیچے کپڑے کو  چادر اور اس کے اوپر والے کپڑے کو ا ذار  کہتے ہیں   قمیص کا کپڑا  جو  ٩ فٹ کا ہو تا  ہے اس کو بیچ میں اس طرح سے کاٹ لیں    کہ  اس میں سے سر نکل آئے اس کپڑے کو اس طرح بچھادیں کہ ایک حصّہ جسم کے نیچے آ جاۓ  اور دوسرا حصّہ  سر نکالنے کے بعد جسم کے اوپر گھٹنوں کے نیچے تک آ جاۓ .

·      تختے پر سے جسم کو اٹھا کر نیچے کپڑے پر لےآ  ئیں خیال رہے کہ سوکھے کپڑے جسم پر موجود رہیں  - پھر  نو فٹ لمبےقمیص کے کپڑے کو بیچ میں سے موڑ کر سر کو باہر نکال لیں اور قمیص کے اوپر والے حصّے  کو جسم کے اوپر گھٹنے کے نیچے  تک ڈھانک دیں – اطمینان سے سوکھے کپڑے کو جسم پر سے نکال لیں  اس کے بعد   ا ذ ار کے دونوں پلوں کو میت کے بایئں سے جسم پر ڈالیں اور پھر اسی  کپڑے کو   جسم پر  دائیں طرف سے ڈالیں.

·        سب سے نیچے جو  چادر ہوتی ہے اس  کو اسی طرح  جسم پر ڈال دیں   پھر  پیروں کی طرف سے دونوں کپڑوں کو بل دے کر  موڑیں پھر سرکی  طرف سےکپڑوں کو  موڑ کر کفن کو  جسم پر  پوری طرح لپیٹ دیں-  

·     پیروں کے پاس،   کمر کے پاس ،  اور   پھر سر کےپاس  کپڑے کے بند بنا کر کفن  کو  باندھیں  

·      کفن   پیر  اور سر کی طرف اس طرح سے باندھ دیں کہ سر نمایاں نظر آ سکے  

·       خاتون  کے لئے کفنانے کا طریقہ

·     آٹھ آٹھ  فٹ لمبے  دو  کپڑے ایک کے اوپر ایک رکھ کر   نیچے بچھادیں  سب سے نیچے کپڑے کو  چادر اور اس کے اوپر والے کپڑے کو ا ذار  کہتے ہیں   قمیص کا کپڑا  جو  ٩ فٹ کا ہو تا  ہے اس کو بیچ میں اس طرح سے کاٹ لیں    کہ  اس میں سے سر نکل آئے اس کپڑے کو اس طرح بچھادیں کہ ایک حصّہ جسم کے نیچے آ جاۓ  اور دوسرا حصّہ  سر نکالنے کے بعد جسم کے اوپر گھٹنوں کے نیچے تک آ جاۓ.

·      قمیص کے کپڑے کے  اوپر  سینہ بند کا کپڑا جو جسم کے نیچے او ر اوپر  گلے سے لے کر گھٹنوں کے نیچے  تک ہو اسکو بھی  بچھادیں   تختے پر سے جسم کو اٹھا کر نیچے کپڑے پر لےآ  ئیں خیال رہے کہ سوکھے کپڑے جسم پر موجود رہیں  -  پھر سینہ بند کے کپڑے کو بغل کے نیچے سے پہلے بایئں طرف سے لپیٹ دیں پھر دائیں طرف سے لپیٹ دیں دونوں ہاتھ کھلے رہنا چاہئے  اس کے بعد دو فٹ  لمبا  دوپٹہ سر پر سے ڈال کر  دونوں سرے سینے کی طرف موڑ دیں  

·          پھر  نو فٹ لمبےقمیص کے کپڑے کو بیچ میں سے موڑ کر سر کو باہر نکال لیں اور قمیص کے اوپر والے حصّے  کو جسم کے اوپر  گھٹنوں  کے نیچے  تک ڈھانک دیں – اطمینان سے سوکھے کپڑے کو جسم پر سے نکال لیں  اس کے بعد   ا ذ ار کے دونوں پلوں کو میت کے بایئں سے جسم پر ڈالیں اور پھر اسی  کپڑے کو   جسم پر  دائیں طرف سے ڈالیں ،   سب سے نیچے جو  چادر ہوتی ہے اس  کو بھی اسی طرح  جسم پر ڈال دیں   پھر  پیروں کی طرف سے دونوں کپڑوں کو بل دے کر  موڑیں اور  پھر سرکی  طرف سےکپڑوں کو  موڑ کر   کفن  کو جسم پر  پوری طرح لپیٹ دیں-

·     پیروں کے پاس،   کمر کے پاس اور پھر سر کےپاس  کپڑے کے بند بنا کر کفن  کو  باندھیں  

·      کفن   پیر  اور سر کی طرف اس طرح سے باندھ دیں کہ سر نمایاں نظر آ سکے  

   ·                                                                                                    کفنانے کے بعد میت کو  تابوت میں رکھ دیں  

·        تابوت کے اوپر  بارہ فٹ لمبا کپڑا ڈالیں  

نماز جنازہ

جنازے کی نماز ہر مسلمان پر فرض ہے لیکن اگر کچھ لوگ اس کو ادا کرلیں تو فرض ادا ہوجاتا ہے یہ نماز جنازے کو امام کے سامنے رکھ کر ادا کی جاتی ہے امام کے پیچھے عام طور پر  طاق  صفیں بنائی جاتی ہیں اس نماز میں رکوع اور  سجدے نہیں ہیں او ر چار تکبیروں کے ساتھ نماز ادا کی جاتی ہے 


 نماز کا طریقہ

میں    نیت  کرتا   ہوں   نماز   جنازہ   ادا   کرنے   کی   واسطے   الله   کے  ، چار   تکبیروں   کے   ساتھ  ، درود   الله   کے  رسول    پر    اور   دعا  اس   جنازے    کے  لئے،  پیچھے   اس   امام   کے ،  رخ   کعبہ   کی  طرف 


 ·      امام   پہلی   تکبیر   الله   و  اکبر کہے   گا  مقتدی

     کان   تک   ہاتھ   اٹھا  کر  ہاتھ   باندھ   لیں    گے 

اور ثناء   پڑھے  گیں جنازے کی  نماز میں      

ایک  اور   لفظ وَجَلَّ ثَناءٌكَ کو ملایا جاتا ہے

 


  سُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ وَبِحَمْدِكَ وَ تَبَاْرَكَ اسْمُكَ

  وَتَعَالَئ جَدُّكَ وَجَلَّ ثَناءٌكَ وَلَااِلَه غَيْرُكَ

  

  ترجمہ

 یا   الله   تیری   ذات   پاک   ہے   خوبیوں   والی   ہے   تیرا   نام   مبارک   ہے   تیری  شان     اونچی    ہے   اور   تعریف   تیری   ہی   ہے   اور   تیرے   سوا   کوئی   معبود   نہیں 

  ·      امام  دوسری   تکبیر   الله  و  اکبر     کہے    گا    اس  بار   مقتدی  صرف    زبانی    تکبیر    ادا   کریں گے


    اس   کے بعد درود ابراہیم ادا کرنا ہوگا  


اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ كَمَا صَلَّيْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ


ترجمہ



یا    الله   حضرت  محمّد  پر   اور  انکی  آل  پر  رحمت  نازل 


فرما   جس  طرح  تو  نے  حضرت  ابراہیم  پر  اور


  انکی  آل  پر  رحمت  نازل  فرمائی  تھی –

 

بیشک  تو  تعریف  کیا  گیا  ہے  ،  بزرگ  ہے  

 

اللَّهُمَّ بَارِكْ عَلَى مُحَمَّدٍ، وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ كَمَا بَارَكْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ إِنَّكَ حَمِيدٌ 

مَجِيدٌ

 

 

ترجمہ


 

یا    الله   حضرت  محمّد  پر   اور  انکی  آل  پر  برکت   نازل


  فرما   جس  طرح  تو  نے  حضرت  ابراہیم  پر  اور 


انکی  آل  پر  برکت   نازل  فرمائی  تھی –


\  بیشک  تو  تعریف  کیا  گیا  ہے  ،  بزرگ  ہے 

 


 امام   تیسری   تکبیر   الله  و  اکبر   کہے   گا    مقتدی   صرف  ذبانی    تکبیر   اد ا   کریں   گے   اور  یہ     د عا    پڑھیں  گے  


اَللّهُمَّ اغْفِرْ لِحَيِّنَا وَمَيِّتِنَا وَ شَاهِدِنَا وَ غَائِبِنَا وَ صَغِيْرِنَا وَكَبِيْرِنَا وَ ذَكَرِنَا وَاُنْثَانَاؕ اَللّهُمَّ مَنْ 

اَحْيَيْتَهُ  مِنَّا فَاَحْيِهِ عَلَي الاِسْلَامِؕ وَمَنْ تَوَفَّيْتَهُ مِنَّا فَتَوَفَّهُ عَلَي الاِيْمَانِؕ



ترجمہ


یا الله   ہمارے  جو  لوگ  زندہ   ہیں    اور  جو  مر   گئے  ہیں  


اور  جو  حاضر  ہیں  اور  جو  غائب  ہیں   اور  جو چھوٹے  ہیں 


 اور  جو  بڑے  ہیں  اور  جو  مرد  ہیں  اور  جو  عورتیں  ہیں


   ان  سب  کی  مغفرت  فرما   اور  یا  الله  جن  کو  تو  ذندہ  رکھے


 انکو  اسلام  پر  حیات  دے  اور  جن  کو  تو  موت  دے  انکو   ایمان  پر  موت دے


·      امام   چوتھی   تکبیر   الله  و  اکبر   کہے   گا        مقتدی   ذبانی     تکبیر   ادا   کریں   گے   اور   امام   سلام    پھیریگا    اور  امام   کے  ساتھ   مقتدی    بھی   سلام     

  پھیریں   گے

السَّلامُ عَلَيْكُمْ وَرَحْمَةُ اللهِ                   

اس   کے    ساتھ   نماز   ختم   ہو گی

اگر  میت     چھوٹے   بچچے    کی   ہو     تو      لڑکی   اور   لڑکے   کے   لئے   دعا   الگ    الگ  ہے   تیسری   تکبیر   تک   نماز   ایک   جیسی  ہی  ہے   تیسری   تکبیر  ادا 

  کرنے   کے   بعد   اس  طرح  د عا   ادا   کریں

  لڑکے   کے   لئے   دعا

 

اَللّهُمَّ اجْعَلْهُ لَنَا فَرَطًا وَّاجْعَلْهُ لَنَا اَجْرًا وَّ ذُخْرًا وَّ اجْعَلْهُ لَنَا شَافِعًا وَّ مُشَفَّعًا

 

لڑکی  کے لئے

 

اَللّهُمَّ اجْعَلْهَا لَنَا فَرَطًا وَّاجْعَلْهَا لَنَا اَجْرًا وَّذُخْرًا وَّاجْعَلْهَا لَنَا شَافِعَةً وَّمُشَفَّعَةًؕ

 ترجمہ  

یا   الله   اس   بچچے  کو  ہمارے   لئے   انعام  کا  مستحق   بنا   اور   اس  کو   ہمارے  لئے   سفارش   کا   ذریعہ   بنا.

چوتھی  تکبیر   کے   بعد   نماز   کا   طریقہ   ویسا   ہی   ہے   جیسے   بالغ   لوگوں   کے   لئے    ہے

جنازہ لے جانے کے  آداب


·     اگر جنازہ قبرستان تک کاندھو پر لے جایا جا رہا  ہو  تو سڑک کے ایک طرف  چلیں اور تین یا چار اشخاص لوگوں کو ایک طرف رہنے کی 

ہدایتیں دیتے رہیں اس طرح ہم سڑک کو استمعال کرنے والے دوسرے لوگوں کو پریشانی اور تکلیف سے بچا سکتے ہیں یہی ہماری 

تہذیب اور معاشرہ ہے جس کا مظاہرہ کرنا ایک اچھی بات ہے

·     کندھا دینے کے لئے پہلے سیدھی طرف آگے سے شروع کریں اور پھر اسی طرف پیچھے آجائیں پھر دوسری جانب جا کر اسی طرح کندھا دیں یاد رہے کہ کندھا  دیتے وقت کلمہ شہادت پڑھتے رہیں

   دفنانا 

·     جنازہ جب قبرستان پہچے  تو اس کو قبر کے قریب رکھتے وقت ہر  شخص اپنی راۓ نہ دے بلکہ ذکر الہی کرتے رہیں  

·     قبر گہری اور چوڑی بنائی جاۓ

·     میت قبر میں جب رکھی جاۓ اس وقت بھی ایک دو صاحبان ہی صلاح  دیں  

·     میت قبر میں رکھتے وقت سر کو قبلہ رخ کریں

·     قبر میں کوئی اور چییز نہ رکھی جاۓ

·     قبر کے اوپر جب فرشی رکھی جاۓ تو اس بات کا لحاظ رکھیں کہ لوگ قطار میں جا کر تین مٹھی مٹی ڈالیں - احتیاط رکھیں کہ سب لوگ ایک ساتھ مٹی ڈالنے کی کوشش نہ کریں


·   مٹی ڈالتے وقت یہ د عا  پڑھیں 


مِنۡهَا خَلَقۡنٰكُمۡ وَفِيۡهَا نُعِيۡدُكُمۡ وَمِنۡهَا نُخۡرِجُكُمۡ تَارَةً اُخۡرٰى

ترجمہ :

اسی مٹی سے ہم نے تم کو پیدا کیا اور اسی میں تمھیں لے جائیں گے اور اسی مٹی سے تم کو  دو بارہ   نکالیں گے  

·     قبرستان میں دفناتے وقت ذکر الہی اور آخرت کی فکر کرتے رہیں اور  دنیاوی باتوں سے پرہیز کریں

---------------------------------------------------------------------------                      


Comments