Day of Resurrection or Judgement (Qayamat)


Resurrection means Restore to Life.

This is very important for all the Muslims to believe that there is going to be another permanent life in the Hereafter and every human being has to face the Day of Judgement . On that Day The Al Mighty Allah will decide the fate of every human being on the basis of what kind of life he had spent in this world .

Therefore all of us must accept that after the death when the day of reserruction will arrive our lives will be restored and we have to face the Day of Judgement.


Allah Rabbul Izzat had described the day of Disaster ( Qayamat) in diiferent chapters of Quran. They are as under :

Surah No.2 , Al Baqr , Ayat No.48


وَاتَّقُواْ يَوْماً لاَّ تَجْزِي نَفْسٌ عَن نَّفْسٍ شَيْئاً وَلاَ يُقْبَلُ مِنْهَا شَفَاعَةٌ وَلاَ يُؤْخَذُ مِنْهَا عَدْلٌ وَلاَ هُمْ يُنصَرُونَo

:Translation

Fear the Day ( the day of Judgement) when a person shall be of no avail to another.Neither intercession (pleading on behalf of another person) will be accepted nor compensation shall be taken from anyone, nor anyone shall be helped from outside

Surah No.7 , Al Aaraf , Ayat No. 187


يَسْأَلُونَكَ عَنِ السَّاعَةِ أَيَّانَ مُرْسَاهَا قُلْ إِنَّمَا عِلْمُهَا عِندَ رَبِّي لاَ يُجَلِّيهَا لِوَقْتِهَا إِلاَّ هُوَ ثَقُلَتْ فِي السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضِ لاَ تَأْتِيكُمْ إِلاَّ بَغْتَةً يَسْأَلُونَكَ كَأَنَّكَ حَفِيٌّ عَنْهَا قُلْ إِنَّمَا عِلْمُهَا عِندَ اللّهِ وَلَـكِنَّ أَكْثَرَ النَّاسِ لاَ يَعْلَمُونَ

Translation :


They ask you about the (final) Hour (of Resurrection)- when will it come ? Say :

"The knowledge of it is with my Lord (alone): No one, but He can reveal as to when it will occur. Heavy will be its burden both in the heavens and the earth.And all of a sudden it will come to you." They ask you : as if you are eager in search of it : Say Its knowledge is with Allah alone but most of the mankind do not know.

Surah No.17 , Bani Israil , Ayats No.49 to 51

o وَقَالُواْ أَئِذَا كُنَّا عِظَامًا وَرُفَاتًا أَإِنَّا لَمَبْعُوثُونَ خَلْقًا جَدِيدًا

أَوْ خَلْقًا مِّمَّا يَكْبُرُ فِي صُدُورِكُمْ فَسَيَقُولُونَ o قُل كُونُواْ حِجَارَةً أَوْ حَدِيدًا

خَلْقًا مِّمَّا يَكْبُرُ فِي صُدُورِكُمْ فَسَيَقُولُونَ إِلَيْكَ رُؤُوسَهُمْ وَيَقُولُونَ

o مَتَى هُوَ قُلْ عَسَى أَن يَكُونَ قَرِيبًا

Translation :

They say: " when we are reduced to bones and fragments (dust), should we really be raised (again) as a new creation?" You be stones or iron, "Or any created matter ,which in your minds, is greater (or harder to be raised up),- Yet you shall be raised up!" then they will say: "Who will cause us to return?" Say: "He who created you first!" Then they will tilt their heads towards you , and say, "When will be that ?" Say, "May be it will be soon!

Comments :


Two methods of disposal of the dead bodies are common in the world. First is Burying and the second is cremation (after cremation the ashes are dispersed in rivers wherein river water enters sea). After several years of disposal of the dead body we never know what kind of matter is formed . Allah has clearly mentioned that whatever matter is created after the disposal of the dead bodies He is going to recreate the same person from it. Therefore one should understand that Allah will cause you to return to the life from any created matter after your death.



Surah No. 20 ,Ta`ha , Ayats No.105 to 108

oفَيَذَرُهَا قَاعًا صَفْصَفًا oيَسْأَلُونَكَ عَنِ الْجِبَالِ فَقُلْ يَنسِفُهَا رَبِّي نَسْفًا

يَوْمَئِذٍ يَتَّبِعُونَ الدَّاعِيَ لَا عِوَجَ لَهُ وَخَشَعَت oلَا تَرَى فِيهَا عِوَجًا وَلَا أَمْتًا

oلْأَصْوَاتُ لِلرَّحْمَنِ فَلَا تَسْمَعُ إِلَّا هَمْسًا

Translation :

They may ask you about (the fate of) Mountains: say, "My Lord will uproot them and scatter them as dust;

"He will flatten them as smooth plains in level;

"Nothing hollow or curved will you see in their place."

On that Day, they will have no choice but to follow the Caller (straight): their (mouth choked and ) voices hushed, in the Presence of (Allah) Most Gracious: you shall hear no sound except the faint sounds of hesitant feet.


Surah No.22 ,Al Hajj , Ayats No.1&2


يَا أَيُّهَا النَّاسُ اتَّقُوا رَبَّكُمْ إِنَّ زَلْزَلَةَ السَّاعَةِ شَيْءٌ عَظِيمٌoيَوْمَ تَرَوْنَهَا تَذْهَلُ كُلُّ مُرْضِعَةٍ عَمَّا أَرْضَعَتْ وَتَضَعُ كُلُّ ذَاتِ حَمْلٍ حَمْلَهَا وَتَرَى النَّاسَ سُكَارَى وَمَا هُم بِسُكَارَى وَلَكِنَّ عَذَابَ اللَّهِ شَدِيدٌo

Translation :

O mankind! fear your Lord! for the convulsion of the Hour (of Judgement)it will be a terrible thing !

When the Day come ,every suckling mother will forget her suckling-babe, and every pregnant female shall drop her load (unformed): you shall see mankind as in a drunken state, yet not drunk: but the Wrath of Allah will be dreadful .

Surah No.22 ,Al Hajj , Ayat No 5

يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِن كُنتُمْ فِي رَيْبٍ مِّنَ الْبَعْثِ فَإِنَّا خَلَقْنَاكُم مِّن تُرَابٍ ثُمَّ مِن نُّطْفَةٍ ثُمَّ مِنْ عَلَقَةٍ ثُمَّ مِن مُّضْغَةٍ مُّخَلَّقَةٍ وَغَيْرِ مُخَلَّقَةٍ لِّنُبَيِّنَ لَكُمْ وَنُقِرُّ فِي الْأَرْحَامِ مَا نَشَاء إِلَى أَجَلٍ مُّسَمًّى ثُمَّ نُخْرِجُكُمْ طِفْلًا ثُمَّ لِتَبْلُغُوا أَشُدَّكُمْ وَمِنكُم مَّن يُتَوَفَّى وَمِنكُم مَّن يُرَدُّ إِلَى أَرْذَلِ الْعُمُرِ لِكَيْلَا يَعْلَمَ مِن بَعْدِ عِلْمٍ شَيْئًا وَتَرَى الْأَرْضَ هَامِدَةً فَإِذَا أَنزَلْنَا عَلَيْهَا الْمَاء اهْتَزَّتْ وَرَبَتْ وَأَنبَتَتْ مِن كُلِّ زَوْجٍ بَهِيجٍo

Translation :


O mankind! if you have a doubt about the Resurrection, (Remember) that We created you out of dust, then out of sperm, then out of a leech-like clot, then out of a lump of flesh, partly formed and partly unformed, in order that We may show (our power) to you; and We cause to rest you in the wombs for an appointed term, then do We bring you out as babes, then that you may reach your age of full strength; and then some of you are called to die, and some are sent back to the weakest old age, so that they know nothing after having known (much), and (further), you see the earth barren and lifeless, but when We pour down rain on it, it is stirred (to life), it swells, and it puts forth every kind of beautiful growth .


Surah No. 25 , Al Furqan ,Ayats No. 25,26

o وَيَوْمَ تَشَقَّقُ السَّمَاء بِالْغَمَامِ وَنُزِّلَ الْمَلَائِكَةُ تَنزِيلًا

o لْمُلْكُ يَوْمَئِذٍ الْحَقُّ لِلرَّحْمَنِ وَكَانَ يَوْمًا عَلَى الْكَافِرِينَ عَسِيرًا

Translation :

That Day, the sky shall be tear into pieces with clouds, and angels shall be sent down, which will be a grand descending (in ranks),-

That Day, the Sovereignty will belong to The Merciful, and it will be a day of dire difficulty for the nonbelievers.

Surah No.27 , Al Namal , Ayat No. 82

وَإِذَا وَقَعَ الْقَوْلُ عَلَيْهِمْ أَخْرَجْنَا لَهُمْ دَابَّةً مِّنَ الْأَرْضِ تُكَلِّمُهُمْ أَنَّ

o النَّاسَ كَانُوا بِآيَاتِنَا لَا يُوقِنُونَ

Translation :

And when Our Words (Ayat about resurrection) are fulfilled against them, then We will Produce from the earth a beast for them: He will speak to them, that mankind did not believe Our ayat of assurance (Signs).

Comments :

 According to Ibn `Umar, this will happen when there remains no one in the world to command the people to do good and forbid them to do evil. Ibn Marduyah has reported a Hadith on the authority of Abu Said Khudri; according to which the latter heard the same thing from the Holy Prophet (saws) himself. This shows that when man gives up the duty of exhorting others to do good and forbidding them to do evil, AIIah will bring forth a beast to serve as the final warning just before Resurrection. This, however, is not clear whether it will be just one beast, or a particular species of beasts, who will spread all over the earth. The words daabbat-an-min-al-ard might contain both the meanings. In any case, what it will say will be: "The people did not believe Allah's Revelations in which Resurrection was foretold. Now the same Resurrection is about to come; Iet everyone know that what Allah said was true".  As to the time and occasion of the appearance of this beast, the Holy Prophet has said: "The sun will rise in the west and the beast will suddenly appear in the open daylight. Whichever of these signs appears first, it will be closely followed by the other." (Muslim) In the other traditions related in Muslim, Ibn Majah, Tirmidhi, Musnad Ahmad, etc.

Surah No.28 , Al Qasas , Ayats No.60 - 61

وَمَا أُوتِيتُم مِّن شَيْءٍ فَمَتَاعُ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَزِينَتُهَا وَمَا عِندَ اللَّهِ خَيْرٌ وَأَبْقَى

أَفَمَن وَعَدْنَاهُ وَعْدًا حَسَنًا فَهُوَ لَاقِيهِ كَمَن مَّتَّعْنَاهُ o أَفَلَا تَعْقِلُونَ

مَتَاعَ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا ثُمَّ هُوَ يَوْمَ الْقِيَامَةِ مِنَ الْمُحْضَرِينَo

Translation :

The things which are given to you are for the conveniences of this life and it is glittering . Whatever is with Allah is better and remains forever : will you not then understand ? We have made a goodly promise to one man, can he be like the other who is given the good things in this life, who will be among those who will be brought up in front of the Lord on the day of Judgement (for punishment)?

Comments :

This clearly means that the life of this world is temporary and the real life is to come hereafter, wherein one has to live forever. Therefore it will be wise for us to give preference to the next life. Secondly the Religion does not expect you to disconnect yourself from this world, but it does guide you to prioritize the life Hereafter.

Surah No. 36 , Al Yasin , Ayat No.65

O الْيَوْمَ نَخْتِمُ عَلَى أَفْوَاهِهِمْ وَتُكَلِّمُنَا أَيْدِيهِمْ وَتَشْهَدُ أَرْجُلُهُمْ بِمَا كَانُوا يَكْسِبُونَ

Translation :

That Day We shall set a seal on their mouths. But their hands will speak to us, and their feet bear witness, to all that they did.

Surah No. 39 , Al Zumar , Ayats No. 67 to 70

وَمَا قَدَرُوا اللَّهَ حَقَّ قَدْرِهِ وَالْأَرْضُ جَمِيعًا قَبْضَتُهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ وَالسَّماوَاتُ

o وَتَعَالَى عَمَّا يُشْرِكُونَ مَطْوِيَّاتٌ بِيَمِينِهِ سُبْحَانَهُ

وَنُفِخَ فِي الصُّورِ فَصَعِقَ مَن فِي السَّمَاوَاتِ وَمَن فِي الْأَرْضِ إِلَّا مَن

o شَاء اللَّهُ ثُمَّ نُفِخَ فِيهِ أُخْرَى فَإِذَا هُم قِيَامٌ يَنظُرُونَ

وَأَشْرَقَتِ الْأَرْضُ بِنُورِ رَبِّهَا وَوُضِعَ الْكِتَابُ وَجِيءَ بِالنَّبِيِّينَ وَالشُّهَدَاء

o وَقُضِيَ بَيْنَهُم بِالْحَقِّ وَهُمْ لَا يُظْلَمُونَ

o وَوُفِّيَتْ كُلُّ نَفْسٍ مَّا عَمِلَتْ وَهُوَ أَعْلَمُ بِمَا يَفْعَلُونَ


Translation :

They did not estimate the Might of Allah, On the Day of Judgement the whole of the earth will be in His grip, and the skies will be rolled up in His right hand: Glory to Him! He is High above the Partners they set up with Him!

The Trumpet will be sounded, when all who are in the heavens and on earth will die, except those whom Allah will be pleased. Then second trumpet will be sounded, when they all will be standing and looking on!

And the Earth will shine with the Glory of its Lord: and the Record (of Deeds) will be placed (open); the Prophets and the witnesses will be brought forward and a decision pronounced between them; and they will not be wronged .

And to every soul will be paid in full (the fruit) of its Deeds; and (Allah) knows best all that they do.

 
 
Surah Qaaf , No.50 ,Ayat No. 3 & 4

قَدْ عَلِمْنَا مَا تَنقُصُ الْأَرْضُ oأَئِذَا مِتْنَا وَكُنَّا تُرَابًا ذَلِكَ رَجْعٌ بَعِيدٌ

oمِنْهُمْ وَعِندَنَا كِتَابٌ حَفِيظٌ

Translation :

Those who do not believe (in Resurrection) ; Say ! When we die and become dust, shall we live again? Such a return is far (from our understanding)."We already know what the earth consumes of them : We have with Us is a preserved record .

 Surah  Qaaf, No.50, Ayat Nos 20 &21

 

  o  وَجَاءَتْ كُلُّ نَفْسٍ مَعَهَا سَائِقٌ وَشَهِيدٌ o وَنُفِخَ فِي الصُّورِ ذَلِكَ يَوْمُ الْوَعِيدِ 

 

  Translation :

And then the Trumpet was blown. This is the day of the promised chastisement.  Everyone has come, each attended by one who will drive him on, and another who will bear witness.

Comments :

 This implies that blowing of the Trumpet at which alI dead men will rise back to life in their own physical bodies. Most probably this implies the same two angels who had been appointed for compiling the record of the words and deeds of the person in the world. On the Day of Resurrection, when every man will rise on the sounding of the Trumpet, the two angels will come forth immediately and take him into their custody. One of them will drive him to the Divine Court and the other will be carrying his record. 


Surah No.56 , Al Waqia , Ayats No. 4 to 13


إِذَارُجَّتِ الْأَرْضُ رَجًّاoوَبُسَّتِ الْجِبَالُ بَسًّاoفَكَانَتْ هَبَاء مُّنبَثًّاo وَكُنتُمْ أَزْوَاجًا ثَلَاثَةًoفَأَصْحَابُ الْمَيْمَنَةِ مَا أَصْحَابُ الْمَيْمَنَةِoوَأَصْحَابُ الْمَشْأَمَةِ مَا أَصْحَابُ الْمَشْأَمَةِo وَالسَّابِقُونَ السَّابِقُونَoأُوْلَئِكَ الْمُقَرَّبُونَoفِي جَنَّاتِ النَّعِيمِoثُلَّةٌ مِّنَ الْأَوَّلِينَ o

Translation :

When the earth shall be shaken to its depths, and the mountains shall be crumbled to atoms, becoming dust scattered abroad, and you shall be sorted out into three categories.

Those on the Right Hand (how happy )will be those on the right Hand;-

Those on the left Hand (how unhappy) will be those on the left hand .

And those Foremost (in Faith) will be Foremost (in the Hereafter). These will be those Nearest to Allah:In Gardens of Paradise : A number of earlier generation and few from those of old.


 
Surah No. 69 , Al Haaqqah , Ayats No. 13 to 18
 
 
                                                                                                                        فَإِذَا نُفِخَ فِي الصُّورِ نَفْخَةٌ وَاحِدَةٌ

 وَحُمِلَتِ الْأَرْضُ وَالْجِبَالُ فَدُكَّتَا دَكَّةً وَاحِدَةًo فَيَوْمَئِذٍ وَقَعَتِ الْوَاقِعَةُ oوَانشَقَّتِ السَّمَاء فَهِيَ يَوْمَئِذٍ وَاهِيَةٌ

وَالْمَلَكُ عَلَى أَرْجَائِهَا وَيَحْمِلُ عَرْشَ رَبِّكَ فَوْقَهُمْ يَوْمَئِذٍ ثَمَانِيَةٌoيَوْمَئِذٍ تُعْرَضُونَ لَا تَخْفَى مِنكُمْ خَافِيَةٌo

 
 Translation :

When one blast is sounded on the Trumpet, and the earth is moved, and its mountains are crushed to powder at one stroke,- On that Day the (Great) Event come to pass. And the sky will be tear into pieces, it will lose its grip, and the angels will be around its sides, and eight angels will, bear the Throne of the Lord above them. That Day you shall be brought to Judgement: no act of yours remains hidden.

 

Surah No.70 ,Al Ma`arij ,Ayat No 4

o تَعْرُجُ الْمَلَائِكَةُ وَالرُّوحُ إِلَيْهِ فِي يَوْمٍ كَانَ مِقْدَارُهُ خَمْسِينَ أَلْفَ سَنَةٍ

Translation :

The angels and the spirit will ascend in a Day ,the measure of which is fifty thousand years:

 

Surah No.70 , Al Maa`rij , Ayats No.8 to 11

يَوْم تَكُونالسَّمَاءكَالْمُهْلِoوَتَكُونُ الْجِبَالُ كَالْعِهْنِoوَلَا يَسْأَلُ حَمِيمٌ حَمِيمًاo

Translation :

That Day the sky will be like molten brass,And the mountains will be like wool,

And no friend will ask after a friend,though they will be in sight of each other.


Surah No.75 , Al Qiamah ,Ayats No.3 to 13


0 بَلَى قَادِرِينَ عَلَى أَن نُّسَوِّيَ بَنَانَهُ o أَيَحْسَبُ الْإِنسَانُ أَلَّننَجْمَعَ عِظَامَهُ

o فَإِذَا بَرِقَ الْبَصَرُ o يَسْأَلُ أَيَّانَ يَوْمُالْقِيَامَةِ o بَلْيُرِيدُ الْإِنسَانُ لِيَفْجُرَ أَمَامَهُ

o يَقُولُ الْإِنسَانُ يَوْمَئِذٍ أَيْنَ الْمَفَرُّ o وَجُمِعَالشَّمْسُ وَالْقَمَرُ o وَخَسَفَ الْقَمَرُ

oيُنَبَّأُالْإِنسَانُ يَوْمَئِذٍ بِمَا قَدَّمَ وَأَخَّرَ oإِلَى رَبِّكَ يَوْمَئِذٍ الْمُسْتَقَرُّ o كَلَّا لَا وَزَرَ


Translation :

Does man think that We shall not assemble his bones? Yes, verily Yes. We are Able to restore even his very tips of fingers also! (Finger prints). But the man is harping upon to send his sins before him. He asks : When will come this Day of Resurrection? When sight shall be dazzled ; And the moon is eclipsed And the sun and moon are united, On that day man will cry: where to flee ! No !there is no refuge! That day, you will be infront of your Lord. On that day man will be told that what he has sent before and what he has left behind.


Comments :

Allah had confirmed that He is not only capable of reassembling the skeleton but also the finger tips of each human being. And those will be the same as they were in this world.

Medical science says that finger prints on the finger tips of a man do not match with that of another person. In the life Hereafter as Allah says “ He is fully capable of regenerating Human being along with the same finger tips (Finger Prints)

Please note that approximately after many centuries the Medical Science has investigated the importance of finger prints while Allah had already indicated the importance of the finger tips (finger prints).


Surah No.77 , Al Mursalat , Ayats No.7 to 11

o وَإِذَا السَّمَاء فُرِجَتْ oفَإِذَا النُّجُومُ طُمِسَتْ o إِنَّمَا تُوعَدُونَ لَوَاقِعٌ

oوَإِذَا الرُّسُلُ أُقِّتَتْ o وَإِذَا الْجِبَالُ نُسِفَتْ


Translation :

Surely , what you are promised must come to pass .When the stars become dim ; When the sky is cleft open ; When the mountains are scattered as dust; and when all the apostles are (all) brought together at appointed time .( That day it will happen )

Surah No.80 , Al Abas , Ayats No.33 to 37

وَأُمِّهِ وَأَبِيهِ oيَوْمَ يَفِرُّ الْمَرْءُ مِنْ أَخِيهِ oفَإِذَا جَاءتِ الصَّاخَّةُ

oلِكُلِّ امْرِئٍ مِّنْهُمْ يَوْمَئِذٍ شَأْنٌ يُغْنِيهِ oوَصَاحِبَتِهِ وَبَنِيهِ

Translation :

When at last, there comes the Deafening sound ,- That Day a man will flee from his own brother, and from his mother and his father, and from his wife and his children. That Day each one will have enough concern (of his own) to make him indifferent to the others.

Surah No.81 , At Takweer , Ayats No.1 to 14

oإِذَا الْجِبَالُ سُيِّرَتْ o وَإِذَا النُّجُومُ انكَدَرَتْ oإِذَا الشَّمْسُ كُوِّرَتْ

o وَإِذَا الْبِحَارُ سُجِّرَتْ oوَإِذَا الْوُحُوشُ حُشِرَتْo وَإِذَا الْعِشَارُ عُطِّلَتْ

oبِأَيِّ ذَنبٍ قُتِلَتْ oإِذَا الْمَوْؤُودَةُ سُئِلَتْ oوَإِذَا النُّفُوسُ زُوِّجَتْ

o وَإِذَا الْجَحِيمُ سُعِّرَتْ o وَإِذَا السَّمَاء كُشِطَتْ oوَإِذَا الصُّحُفُ نُشِرَتْ

oعَلِمَتْ نَفْسٌ مَّا أَحْضَرَتْ o وَإِذَا الْجَنَّةُ أُزْلِفَتْ

Translation :

When the sun is folded up; When the stars turn dim and fade away; When the mountains vanish (like a mirage); When the she-camels, ten months pregnant, are left unattended; When the wild beasts are herded together ; When the oceans boil and set on fire ; When the souls are sorted out, (reunited); The young girl who was buried alive, will ask -For what crime she was killed; When the ledgers are opened; When the skies are unveiled; When the Hell is kindled to fierce heat with blazing fire ; And when the Paradise is brought near;- (Then) each soul shall know what it has earned.



Surah No. 84 , Al Insheqaq , Ayats No.1 to 5


oوَإِذَا الْأَرْضُ مُدَّتْ oوَأَذِنَتْ لِرَبِّهَا وَحُقَّتْ oإِذَا السَّمَاء انشَقَّتْ

oأَذِنَتْ لِرَبِّهَا وَحُقَّتْ o وَأَلْقَتْ مَا فِيهَا وَتَخَلَّتْ


Translation :

When the sky is tear to pieces, and obeys to (the Command of) its Lord, and it must obey, whatever command is given by his Lord. ;-and when the earth is stretched and levelled ,throws out every thing within it and becomes empty, and obeys to (the Command of) its Lord,- and it must obeys the command of his Lord .


Surah No.99 , Al- Zalzala , Ayats No.1 to 8

o وَقَالَ الْإِنسَانُ مَا لَهَا o وَأَخْرَجَتِ الْأَرْضُ أَثْقَالَهَا oإِذَا زُلْزِلَتِ الْأَرْضُ زِلْزَالَهَا

o بِأَنَّ رَبَّكَ أَوْحَى لَهَا oيَوْمَئِذٍ تُحَدِّثُ أَخْبَارَهَا

oفَمَن يَعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ خَيْرًا يَرَهُ oيَوْمَئِذٍ يَصْدُرُ النَّاسُ أَشْتَاتًا لِّيُرَوْا أَعْمَالَهُمْ

o وَمَن يَعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ شَرًّا يَرَهُ

Transaltion :

When the earth is shaken to her (Last) mighty earth quake, and the earth throws out her burdens, and the terrified man asks ‘What is the matter with her ?’-

On that Day she will declare her happenings: For that, your Allah will have inspired her to do.

On that Day all men will proceed in sorted out groups, to be shown their past deeds that they had done .Then anyone who has done an atom’s weight of good, will see it! And anyone who has done an atom’s weight of evil, shall see it.



Surah No.101 , Al Qaria , Ayats No.1 to 11


oوْمَ يَكُونُ النَّاسُ كَالْفَرَاشِ الْمَبْثُوث oوَمَا أَدْرَاكَ مَا الْقَارِعَةُo مَا الْقَارِعَةُoالْقَارِعَةُ

o فَأَمَّا مَن ثَقُلَتْ مَوَازِينُهُ o وَتَكُونُ الْجِبَالُ كَالْعِهْنِ الْمَنفُوشِ

oفَأُمُّهُ هَاوِيَةٌ oوَأَمَّا مَنْ خَفَّتْ مَوَازِينُهُ oفَهُوَ فِي عِيشَةٍ رَّاضِيَةٍ

o نَارٌ حَامِيَةٌ o وَمَا أَدْرَاكَ مَا هِيَهْ

Translation :

The (Day) of Noise and Clamour (loud uproar) :What is the (Day) of Noise and Clamour ?And what will you know, what the (Day) of Noise and Clamour is? (It is) a Day when men will be like scattered moths, and the mountains will be like carded wool. Then, he whose balance (of good deeds) will be (found) heavy, Will be in a life of good pleasure and satisfaction. But he whose balance (of good deeds) will be (found) light,- Will have his home in a Deep Pit. And what will you know, what is this ? It is a fiercely blazing Fire!

Surah Al Kauthar (Kausar) No.108, Ayats No. 1 & 2

 
oفَصَلِّ لِرَبِّكَ وَانْحَرْ  oإِنَّا أَعْطَيْنَاكَ الْكَوْثَر 
 
Translation :

We have granted you Kausar (Signifies Abundance). Therefore pray to Allah and make sacrifice.

Comments :

When this surah was revealed, Prophet Mohammad (saws) was facing big challenges and lots of difficulties in Mecca. Many people in Mecca had negative attitude and they were not only taking serious objections but also torturing and troubling those who have accepted Islam. It was a very tough time for the Prophet and at times he used to become sad. In the surah Al kausar, Allah has informed the Prophet that he should not be disheartened as We have provided you Kausar (a canal, specially in the Heaven of the Prophet, which will be fetching water to the main Pond).

In the life Hereafter, when men would be thirsty, the Prophet Mohammad (saws) will be providing water from the pond of Kausar to his followers. The specialty of this water will be that, when any believer drinks this water, his thirst would go away for ever.


"The Prophet Mohammad (saws) had also informed that Kausar`s water will be whiter than milk, cooler than ice, sweeter than honey and smells better than husk. Those who drink it once will not feel thirst. The Prophet had warned that some of his followers would be pushed out from the Pond of Kausar. He will ask, why they are being pushed out? he would reply that they are those who have brought changes in his preachings and added their own. He will also ask them to go away from him”
(Bukhari, Muslim, Ahmad, Abu Daud, and Ibne Maaja)

If you have any feedback please revert to:  arifrk43@gmail.com


***************************************************************************************************************
**************************************************************************************************************



                                           یوم قیامت یا روز جزا 

 قیامت سے مراد ہے کہ مرنے کے بعد زندگی میں بحال ہونا – تمام مسلمانوں کے لئے یہ یقین کرنا

 بہت ضروری ہےکہ آخرت میں زندگی پھر سے شروع  ہونے والی ہے جو وہاں مستقل ہوگی اور ہر

 انسان کو اس     کا سامنا  کرنا ہےاس دن اللہ تعا لٰی ہر انسان    کی   تقدیر  کا فیصلہ کریں گے لہٰذا ہم سب

 کویہ بات قبول کرنی ہوگی کہ جب قیامت کا دن آئے گا تو اسوقت ہر ذندہ جاندار کو قیامت کا سامنا کرنا

 پڑے گا پھر  مرنے کے بعد ہماری  ذ ندگیاں بحال ہوں گی

اللہ ربُّ العِزّت نے قرآن کے مختلف ابواب میں یوم تباہی ( قیامت ) کی تفصیل بیان کی

 ہے –وہ مندرجہ ذیل ہے     



سورہ نمبر ٢، البقر ، آیت نمبر  ٤٨  


وَاتَّقُوۡا يَوۡمًا لَّا تَجۡزِىۡ نَفۡسٌ عَنۡ نَّفۡسٍ شَيۡـًٔـا وَّلَا يُقۡبَلُ مِنۡهَا شَفَاعَةٌ وَّلَا يُؤۡخَذُ مِنۡهَا عَدۡلٌ وَّلَا هُمۡ يُنۡصَرُوۡنَ‏


ترجمہ


اور اس دن سے ڈرو جب کوئی کسی کے کام نہ آئےگا اور نہ کسی کی سفارش منظور نہ کی جائیگی اور نہ

کسی سے کسی طرح کا بدلہ قبول کیا جائیگا اور نہ لوگ مدد حاصل کر سکیں گے 


سورہ نمبر ٧، ال اعراف ، آیت نمبر ١٨٧ 


يَسْأَلُونَكَ عَنِ السَّاعَةِ أَيَّانَ مُرْسَاهَا قُلْ إِنَّمَا عِلْمُهَا عِندَ رَبِّي لاَ يُجَلِّيهَا لِوَقْتِهَا إِلاَّ هُوَ ثَقُلَتْ فِي السَّمَاوَاتِ

 وَالأَرْضِ لاَ تَأْتِيكُمْ إِلاَّ بَغْتَةً يَسْأَلُونَكَ كَأَنَّكَ حَفِيٌّ عَنْهَا قُلْ إِنَّمَا عِلْمُهَا عِندَ اللّهِ وَلَـكِنَّ أَكْثَرَ النَّاسِ لاَ

 يَعْلَمُونَ


 

ترجمہ

 

 (یہ لوگ) آپ سے قیامت کے بارے میں پوچھتے ہیں کہ اس کے واقع ہونے کا وقت کب ہے –

کہئے، کہ اس کا علم تو میرے پروردگار کو ہی ہے –وہی اسے اپنے وقت پر ظاہر کردیگا ، وہ آسمان اور

 زمین میں ایک بھاری بات ہوگی اور ناگہاں آپ لوگوں پر آ جائیگی یہ آپ سے دریافت کرتے ہے

 جیسے تم اس  سے بخوبی واقف ہو آپ کہ دیجئے کہ اس کا علم تو صرف اللہ ہی کو ہی ہے لیکن اکثر

 لوگ یہ بات نہیں جانتے  

     

سورہ نمبر ١٧، بنی اسرائیل ، آیت نمبر ٤٩ سے ٥١ تک 

 

وَقَالُواْ أَئِذَا كُنَّا عِظَامًا وَرُفَاتًا أَإِنَّا لَمَبْعُوثُونَ خَلْقًا جَدِيدًا

أَوْ خَلْقًا مِّمَّا يَكْبُرُ فِي صُدُورِكُمْ فَسَيَقُولُونَ قُل كُونُواْ حِجَارَةً أَوْ حَدِيدًا

خَلْقًا مِّمَّا يَكْبُرُ فِي صُدُورِكُمْ فَسَيَقُولُونَ إِلَيْكَ رُؤُوسَهُمْ وَيَقُولُونَ

مَتَى هُوَ قُلْ عَسَى أَن يَكُونَ قَرِيبًا

  

ترجمہ


 اور کہتے ہیں کہ جب ہم (مر کر بوسیدہ) ہڈّیوں اور چور چور ہو جائیں گے تو کیا ہم نئے سرے سے پیدا کر

 کے اٹھائے جائیں گے کہہ دیجئے کہ تم پتھر ہو جاؤ یا لوہا یا کوئی اور چییز ہو جاؤ جو تہارے نزدیک

 لوہے سے بھی بڑی سخت ہو  – پھر وہ کہیں گے ہمیں کون دوبارہ جلائے گا ؟ کہہ  دیجئے وہی جس

 نے تمھیں پہلی بار پیدا کیا تھا تو (تعجب سے) آپکے آگے سر ہلائیں گے اور پوچھیں گے کہ ایسا کب

 ہوگا  ؟ کہہ  دیجئے کہ  امید ہے جلد ہوگا    !  

 

 

تبصرہ :


دنیا میں لاشوں کو ضائع کرنے کے دو طریقے ہیں – پہلا دفن کرنا اور دوسرا لاشوں کو جلا دینا ( جلانے کے بعد راکھ کو دریا میں منتشر کر دی  جاتی ہے پھر دریا کا پانی سمندر میں مل جاتا ہے ) لاشوں کو ضائع کرنے کے بعد یہ جاننا مشکل ہوتا ہے کہ کس قسم کا مادہ بنتا ہے لیکن اللہ نے یہ بات بلکل صاف کر دی کہ مرنے کے بعد تم پتھر بن جاؤ، یا لوہا بن جاؤ یا کوئی اور مادہ بن جاؤ پھر بھی ہم تمھیں دوبارہ ذندہ کریں گے   


 سورہ نمبر ٢٠ ،  طہ ، آیت نمبر ١٠٥ سے


 oفَيَذَرُهَا قَاعًا صَفْصَفًا oيَسْأَلُونَكَ عَنِ الْجِبَالِ فَقُلْ يَنسِفُهَا رَبِّي نَسْفًا

يَوْمَئِذٍ يَتَّبِعُونَ الدَّاعِيَ لَا عِوَجَ لَهُ وَخَشَعَت oلَا تَرَى فِيهَا عِوَجًا وَلَا أَمْتًا

oلْأَصْوَاتُ لِلرَّحْمَنِ فَلَا تَسْمَعُ إِلَّا هَمْسًا

 

 ترجمہ

 

وہ آپ  سے پہاڑوں کے( مستقبل )    کے  بارے میں پوچھتے ہیں تو   کہہ دو کہ میرا رب ان کو جڑ سے

 اکھاڑ  پھینکے گا اور ان کومٹی کی طرح بکھیرے گا اور پھر وہ ان کو  ہموار میدانوں کی طرح کر دیگا

 آپ کو میدانوں میں کوئی کھوکھلی زمین نظر نہ آئیگی اس دن انکے پاس کوئی راستہ نہ ہوگا صرف

 بلانے والے کی طرف  جانے کا  راستہ ہوگا ان کے منہ بند ہونگیں انکو کوئی آواز سنائی نہ دیگی صرف

 دھیمی دھیمی پاؤں کے چلنے کی آواز کے علاوہ -     

سورہ نمبر ٢٢، ال حج ، آیت نمبر ١ اور ٢  

 

 

يَا أَيُّهَا النَّاسُ اتَّقُوا رَبَّكُمْ إِنَّ زَلْزَلَةَ السَّاعَةِ شَيْءٌ عَظِيمٌoيَوْمَ تَرَوْنَهَا تَذْهَلُ كُلُّ مُرْضِعَةٍ عَمَّا أَرْضَعَتْ وَتَضَعُ كُلُّ ذَاتِ حَمْلٍ حَمْلَهَا وَتَرَى النَّاسَ سُكَارَى وَمَا هُم بِسُكَارَى وَلَكِنَّ عَذَابَ اللَّهِ شَدِيدٌo

 

ترجمہ :

 

لوگوں اپنے پروردگار سے ڈرو – کہ قیامت کا زلزلہ ایک ہولناک حادثہ ہوگا – جس دن تو اس کو دیکھےگا

  تو( اس دن یہ حال ہوگا  کہ )تمام دودھ پلانے عورتیں اپنےبچوں کو بھول جائیں گی – اور تمام

 حمل والی عورتیں کے حمل گر پڑیں گے اور لوگ آپ کو مدہوش نظر آئیں گے مگر وہ  مدہوش نہ

 ہونگیں  بے شک اللہ کا عذاب بڑاہولناک اور سخت ہے      

 

 سورہ نمبر ٢٢، ال حج ، آیت نمبر ٥ 

  يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِن كُنتُمْ فِي رَيْبٍ مِّنَ الْبَعْثِ فَإِنَّا خَلَقْنَاكُم مِّن تُرَابٍ ثُمَّ مِن نُّطْفَةٍ ثُمَّ مِنْ عَلَقَةٍ ثُمَّ مِن مُّضْغَةٍ مُّخَلَّقَةٍ وَغَيْرِ مُخَلَّقَةٍ لِّنُبَيِّنَ لَكُمْ وَنُقِرُّ فِي الْأَرْحَامِ مَا نَشَاء إِلَى أَجَلٍ مُّسَمًّى ثُمَّ نُخْرِجُكُمْ طِفْلًا ثُمَّ لِتَبْلُغُوا أَشُدَّكُمْ وَمِنكُم مَّن يُتَوَفَّى وَمِنكُم مَّن يُرَدُّ إِلَى أَرْذَلِ الْعُمُرِ لِكَيْلَا يَعْلَمَ مِن بَعْدِ عِلْمٍ شَيْئًا وَتَرَى الْأَرْضَ هَامِدَةً فَإِذَا أَنزَلْنَا عَلَيْهَا الْمَاء اهْتَزَّتْ وَرَبَتْ وَأَنبَتَتْ مِن كُلِّ زَوْجٍ بَهِيجٍo

 

 

ترجمہ :

 

لوگوں تم کو موت کے بعد زندگی کے بارے میں کچھ شک ہے تو تمھیں معلوم ہو کہ ہم نے تم کو

 مِّٹی    سے پیدا کیا  ،  پھر  نطفے سے ،  پھر خون کے لوتھڑے سے ،  پھر گوشت کی بوٹی سے جو شکل والی

 بھی ہوتی اور  بے شکل بھی -  تاکہ تم پر حقیقت واضح کر دیں -  ہم جس کو چاہتے ہیں ایک مقررّہ

 میعاد تک پیٹ میں ٹھہرائے رکھتے ہیں  پھر تم کو بچہ بنا کر نکالتے ہیں – پھر تم جوانی کو پہنچتے ہو –

اور  بعض مرجاتے ہیں اور  بعض بد ترین عمر میں پہنچ جاتے ہیں بہت کچھ جاننے کے بعد بلکل بے

 علم ہو جاتے ہیں اور تو دیکھتا ہے  (ایک وقت میں) زمین خشک (ہوتی ہے) پھر جب ہم اس پر

 مینہ برساتے ہیں تو وہ شاداب ہو جاتی ہے اور ابھرنے لگتی ہے  اور طرح طرح کی  با رونق چیزیں

 اگاتی ہے      


 

سورہ نمبر ٢٥، الفرقان ، آیت نمبر ٢٥ اور  ٢٦

 

 

وَيَوْمَ تَشَقَّقُ السَّمَاء بِالْغَمَامِ وَنُزِّلَ الْمَلَائِكَةُ تَنزِيلًا

لْمُلْكُ يَوْمَئِذٍ الْحَقُّ لِلرَّحْمَنِ وَكَانَ يَوْمًا عَلَى الْكَافِرِينَ عَسِيرًا

 

ترجمہ :

  

اور جس دن آسمان ابر کے سا پھٹ جاۓ گا اور  فرشتے نازل کئے جائیں گے اس دن سچی بادشاہی

 اللہ ہی کی ہوگی اور وہ دن کافروں پر سخت مشکل کا ہوگا 

 

سورہ نمبر ٢٧، ان نمل ، آیت نمبر  ٨٢

  

وَإِذَا وَقَعَ الْقَوْلُ عَلَيْهِمْ أَخْرَجْنَا لَهُمْ دَابَّةً مِّنَ الْأَرْضِ تُكَلِّمُهُمْ أَنَّ

النَّاسَ كَانُوا بِآيَاتِنَا لَا يُوقِنُونَ

  

ترجمہ :

 

 اور جب ہماری بات پورا ہونے کا وقت ان پر آ پہنچے گا  تو ہم ان کے لئے ایک جانور زمین میں سے

 نکالیں گے جو ان سے کلام کرے گا اس لئے کہ یہ  لوگ ہماری آیتوں پر ایمان نہیں لاتے تھے  

  

تبصرہ :


ابن عمر (رضی اللہ و  تعالٰی عنہو) کے نزدیک یہ تب ہوگا کہ جب دنیا میں لوگوں کو نیکی کا حکم دینے

 والا  اور برائی سے روکنے والا کوئی نہیں بچے گا ابن مردویہ نے ابوسعید خدری  (رضی اللہ و  تعالٰی عنہو)

سے ایک حدیث نقل کی ہے جس کے مطابق  رسول اللہ صلی اللہ و  علیہ و سلم  نے بتایا تھا

 کہ جب لوگ لوگوں کو نیکی کرنے کی ترغیب دینا بند کر دیں گے اور برائی کرنے سے بھی روکنے بند کر

 دیں گے تو  اللہ  زمین میں سے جانور نکالے گا جو لوگوں کو تنبیہ دینے کے لئے ہوگا یہ واضح نہیں ہے

 کہ آیا وہ صرف ایک جانور ہوگا یا وہ نسل پوری دنیا پر پھیلے گی ہو سکتا ہے کہ دَابَّةً مِّنَ الْأَرْضِ   کے

 معنی دونوں ہیں  بہرحال قیامت کی پیشن گوئی میں کی یہ علامت کا ذکر قرآن میں موجود ہے  اللہ کے

 رسول نے یہ بھی فرمایا تھا کہ قیامت کے دن سورج مغرب سے طلوع ہوگا اور دن کی روشنی میں یہ

 جانور اچانک  نکلے گا دونوں میں سے پہلے کوئی بھی ہو سکتی ہے  ( مسلم ، ابن ماجہ ، ترمزی  اور احمد )     

 

سورہ نمبر ٢٨ ،  ال  قصص ، آیت نمبر ٦٠ سے٦١  


 وَمَا أُوتِيتُم مِّن شَيْءٍ فَمَتَاعُ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَزِينَتُهَا وَمَا عِندَ اللَّهِ خَيْرٌ وَأَبْقَى

أَفَمَن وَعَدْنَاهُ وَعْدًا حَسَنًا فَهُوَ لَاقِيهِ كَمَن مَّتَّعْنَاهُ أَفَلَا تَعْقِلُونَ

مَتَاعَ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا ثُمَّ هُوَ يَوْمَ الْقِيَامَةِ مِنَ الْمُحْضَرِينَo 


ترجمہ :


تم لوگوں کو جو کچھ بھی دیا گیا ہے وہ محض دنیا کی زندگی کا سامان اور اسکی زینت ہے ، اور جو کچھ اللہ

 کے پاس ہے وہ اس سے بہتر اور باقی رہنے والا ہے تو کیا تم لوگ عقل سے کام نہیں لیتے – بھلا وہ

 شخص جس سے ہم نے اچھا وعدہ کیا ہو اور وہ اسے پانے والا  ہو کبھی اس شخص کی طرح ہو سکتا ہے

 جسے ہم نے صرف  ہم نےحیات دنیا کا سرو  سامان دے دیا ہو اور پھر وہ قیامت کے روز سزا کے لئے

 پیش ہونے والا ہو

 

سورہ نمبر ٣٦، ال یاسین ، آیت نمبر ٦٥

 

O الْيَوْمَ نَخْتِمُ عَلَى أَفْوَاهِهِمْ وَتُكَلِّمُنَا أَيْدِيهِمْ وَتَشْهَدُ أَرْجُلُهُمْ بِمَا كَانُوا يَكْسِبُونَ


ترجمہ :


آج ہم ان کے مونہوں پر  مہر  لگادیں گے اور جو کچھ وہ (دنیا میں )  کرتے رہے تھے ان کے ہاتھ ہم سے بولیں گے اور ان کے 

پاؤں گواہی دیں گے 

 

سورہ نمبر ٣٩ ، الذّمر ، آیت ٦٧ سے ٧٠ تک

 

وَمَا قَدَرُوا اللَّهَ حَقَّ قَدْرِهِ وَالْأَرْضُ جَمِيعًا قَبْضَتُهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ وَالسَّماوَاتُ

o وَتَعَالَى عَمَّا يُشْرِكُونَ مَطْوِيَّاتٌ بِيَمِينِهِ سُبْحَانَهُ

وَنُفِخَ فِي الصُّورِ فَصَعِقَ مَن فِي السَّمَاوَاتِ وَمَن فِي الْأَرْضِ إِلَّا مَن

o شَاء اللَّهُ ثُمَّ نُفِخَ فِيهِ أُخْرَى فَإِذَا هُم قِيَامٌ يَنظُرُونَ

وَأَشْرَقَتِ الْأَرْضُ بِنُورِ رَبِّهَا وَوُضِعَ الْكِتَابُ وَجِيءَ بِالنَّبِيِّينَ وَالشُّهَدَاء

o وَقُضِيَ بَيْنَهُم بِالْحَقِّ وَهُمْ لَا يُظْلَمُونَ

وَوُفِّيَتْ كُلُّ نَفْسٍ مَّا عَمِلَتْ وَهُوَ أَعْلَمُ بِمَا يَفْعَلُونَ

 

ترجمہ :


ان لوگوں نے اللہ کی قدر ہی نہ کی جیسا کہ اس کی قدر کرنے کا حق  ہے قیامت کے روز پوری زمین

 اسکی مٹھی میں ہوگی اور آسمان اسکے داہنے ہاتھ پر  لپٹے ہوئے  ہونگیں- وہ پاک اور بالاتر ہے اس

 شرک سے جو یہ لوگ کرتے ہیں – اور اس روز صور پھونکا جاۓ گا  اور وہ سب مر کر گر جائیں

 گےاورایک دوسرا صور پھونکا جایگا  یکایک ساری قوم ذندہ ہو جائے گی   زمین اپنے رب کے نور

 سےچمک اٹھے گی کتاب اعمال لا کر رکھ دی جائے گی انبیاء اور تمام گواہ حاضر کردۓ جائیں کے ،

 اور لوگوں کے درمیان ٹھیک ٹھیک حق کے ساتھ فیصلہ کر دیا جاۓ گا اور جو کچھ بھی وہ کرتے تھے

 اللہ خوب جانتا ہے  

 

سورہ نمبر ٥٠ ، قاف آیت نمبر ٣ اور ٤ 

 قَدْ عَلِمْنَا مَا تَنقُصُ الْأَرْضُ oأَئِذَا مِتْنَا وَكُنَّا تُرَابًا ذَلِكَ رَجْعٌ بَعِيدٌ

oمِنْهُمْ وَعِندَنَا كِتَابٌ حَفِيظٌ

 

ترجمہ :

 

کیا جب ہم مر جائیں گے اور خاک ہو جائیں گے  تو کیا  دوبارہ ذندہ ہوں گے  ؟ یہ واپسی تو عقل سے

 دور ہے – زمین ان کے جسم میں سے جو کچھ کھاتی ہے وہ سب ہمارے علم میں ہے اور ہمارے

 پاس ایک کتاب ہے جس میں سب کچھ محفوظ ہے  


سورہ نمبر ٥٠، قاف ، آیت نمبر ٢٠ اور ٢١ 

 

 

  o  وَجَاءَتْ كُلُّ نَفْسٍ مَعَهَا سَائِقٌ وَشَهِيدٌ o وَنُفِخَ فِي الصُّورِ ذَلِكَ يَوْمُ الْوَعِيدِ 

 

ترجمہ :


اور صور پھونکا  جائگا ،  یہی وعید (عذاب) کا دن ہے – اور ہر شخص ہمارے سامنے آئے گا  ایک

 (فرشتہ) اس کو چلانے والا ہوگا اور دوسرا (فرشتہ اس کے اعمالوں ) کی گواہی دینے والا  

 

تبصرہ :

اس کا مطلب یہ ہےصور پھونک نے کے بعد مردہ اپنے جسموں کے ساتھ ذندہ ہوں گے اس کے

 ساتھ وہی دو فرشتے ہونگے جو دنیا میں اسی شخص کے قول و فعل کا ریکارڈ مرتّب کرنے کے لئے مقرّر

 کے گئے تھے قیامت کے دن جب ہر شخص صور کی آواز پر اٹھے گا ، دونوں فرشتے فوراّ  سامنے آئیں گے

 اور اس شخص کو اپنی تحویل مے لے لیں گے ایک اس کو اللہ کی عدالت مے لے جائیگا اور دوسرا

 اس کا ریکارڈ لے کر جائیگا-   

 

 سورہ نمبر ٥٦، الواقعہ، آیت ٤ سے ١٣ تک   

                                                                                                                    

إِذَارُجَّتِ الْأَرْضُ رَجًّاoوَبُسَّتِ الْجِبَالُ بَسًّاoفَكَانَتْ هَبَاء مُّنبَثًّاo

 وَكُنتُمْ أَزْوَاجًا ثَلَاثَةًoفَأَصْحَابُ الْمَيْمَنَةِ مَا أَصْحَابُ الْمَيْمَنَةِo

وَأَصْحَابُ الْمَشْأَمَةِ مَا أَصْحَابُ الْمَشْأَمَةِo

 وَالسَّابِقُونَ السَّابِقُونَoأُوْلَئِكَ الْمُقَرَّبُونَo

فِي جَنَّاتِ النَّعِيمِoثُلَّةٌ مِّنَ الْأَوَّلِينَ 

 

ترجمہ :

 

جب زمین زلزلے سے لرزنے لگے گی  -  اور پہاڑ ریزہ ریزہ ہو جائینگے – اور غبار بن کر اڑنے لگے گیں –

 تو تم لوگ تین گروہوں میں تقسیم ہو جاؤ گے-  دائیں بازو والے ، سو دائیں بازو والوں کی (خوش

 نصیبی )  کا کیا کہنا-  اور بائیں بازو والے ، سو بائیں بازو والوں کی (بد نصیبی) کا کیا کہنا -  اور آگے والے

تو پھر  آگےوالے ہی ہیں – وہی تو مُقرّب لوگ ہیں – نعمت بھری جنّتوں میں رہیں گے –  وہ

اگلوں میں سے بہت ہونگے   

  

سورہ نمبر ٦٩ ، الحقہ ، آیت نمبر  ١٣ سے ١٨ تک    


      فَاِذَا نُفِخَ فِى الصُّوۡرِ نَفۡخَةٌ وَّاحِدَةٌ ۙ‏ 

وَحُمِلَتِ الۡاَرۡضُ وَ الۡجِبَالُ فَدُكَّتَا دَكَّةً وَّاحِدَةً ۙ‏  

 فَيَوۡمَٮِٕذٍ وَّقَعَتِ الۡوَاقِعَةُ ۙ‏  وَانْشَقَّتِ السَّمَآءُ فَهِىَ يَوۡمَٮِٕذٍ وَّاهِيَةٌ ۙ‏  

وَّالۡمَلَكُ عَلٰٓى اَرۡجَآٮِٕهَا ‌ؕ وَيَحۡمِلُ عَرۡشَ رَبِّكَ فَوۡقَهُمۡ يَوۡمَٮِٕذٍ ثَمٰنِيَةٌ ؕ

يَوۡمَٮِٕذٍ تُعۡرَضُوۡنَ لَا تَخۡفٰى مِنۡكُمۡ خَافِيَةٌ‏ 

  

 ترجمہ :

 

پھر جب صور میں پھونک مار دی جائے گی – اور زمین اور پہاڑوں کو ایک ہی چوٹ میں ریزہ ریزہ کر

 دیا جاۓ گا – اس روز ہونے والا واقعہ پیش آ جائے گا – اس دن آسمان پھٹے گا اور اس کی بندش ڈھیلی پڑ جائے گی –

فرشتے اسکے اطراف میں ہونگیں اور آٹھ فرشتے اس روز تیرے رب کا عرش اپنے اوپر  اٹھا ئے ہوئے ہونگےوہ دن ہوگا 

جب تم پیش کئے جاؤ   گےاور   تمہارا کوئی راز بھی چھپا نہ رہ جائیگا    


 سورہ نمبر ٧٠ ، المعارج  ، آیت نمبر ٤   


تَعْرُجُ الْمَلَائِكَةُ وَالرُّوحُ إِلَيْهِ فِي يَوْمٍ كَانَ مِقْدَارُهُ خَمْسِينَ أَلْفَ سَنَةٍ


ترجمہ :


(جن سیڑیوں سے ) فرشتے اور روح الامین اور اہل ایمان کی روحیں چڑھ کر جاتی ہیں  - یہ اس دن

 ہوگا جس کی مقدار ٥٠ ہزار سال کی ہے  

 

سورہ نمبر ٨٠ ، ال عبس ، آیت نمبر ٣٣ سے ٣٧  

        

وَأُمِّهِ وَأَبِيهِ oيَوْمَ يَفِرُّ الْمَرْءُ مِنْ أَخِيهِ oفَإِذَا جَاءتِ الصَّاخَّةُ

oلِكُلِّ امْرِئٍ مِّنْهُمْ يَوْمَئِذٍ شَأْنٌ يُغْنِيهِ oوَصَاحِبَتِهِ وَبَنِيهِ 

 

ترجمہ :

 

تو جب ایک تیز  آواز بلند ہوگی  – اس دن آدمی اپنے بھائی سے دور بھاگے گا – اور اپنی ماں  اور باپ

 سے- اور اپنی بیوی اور بیٹے سے – اور ہر شخص اس روز ایک فکر میں ہوگا  اسے اپنے سوا کسی کا ہوش نہ ہوگا   


 سورہ نمبر  ٨١، تکویر ، آیت نمبر  ،  ١ سے ١٤ 

 

oإِذَا الْجِبَالُ سُيِّرَتْ وَإِذَا النُّجُومُ انكَدَرَتْ oإِذَا الشَّمْسُ كُوِّرَتْ

وَإِذَا الْبِحَارُ سُجِّرَتْ oوَإِذَا الْوُحُوشُ حُشِرَتْوَإِذَا الْعِشَارُ عُطِّلَتْ

oبِأَيِّ ذَنبٍ قُتِلَتْ oإِذَا الْمَوْؤُودَةُ سُئِلَتْ oوَإِذَا النُّفُوسُ زُوِّجَتْ

وَإِذَا الْجَحِيمُ سُعِّرَتْ وَإِذَا السَّمَاء كُشِطَتْ oوَإِذَا الصُّحُفُ نُشِرَتْ

oعَلِمَتْ نَفْسٌ مَّا أَحْضَرَتْ وَإِذَا الْجَنَّةُ أُزْلِفَتْ


ترجمہ :


جب سورج لپیٹ دیا جائے گا – اور جب تارے بکھر جائیں گے –اور جب پہاڑ چلائے جائیں گے –

 اور جب دس مہینے کی حاملہ اونٹنیاں اپنے حال پر چھوڑ دی جائیں گی –اور جب جنگلی جانور سمیٹ کر

 اکٹھے کردۓ جائیں گے- اور جب سمندر بھڑ کا دئیے جائیں گے – اور جب جانیں (جسموں) سے جوڑ

 دی جائیں گی- اور جب ذندہ گاڑی ہوئی لڑکی سے پوچھا جائے گا – کہ وہ کس قصور میں ماری گئی تھی

 ؟- اور جب اعمال نامے کھولے جائینگے – اور جب آسمان کا پردہ ہٹا دیا جائے گا – اور جب جہنّم

 دہکائی جاۓ گی- اور جب جنّت قریب لے آئی جائے گی – اس وقت ہر شخص کو معلوم ہو جاۓ گا کہ

 وہ کیا لے کر آیا ہے 


سورہ نمبر ٨٤، ال انشقاق ، آیت نمبر ١ سے ٥ 

 

oوَإِذَا الْأَرْضُ مُدَّتْ oوَأَذِنَتْ لِرَبِّهَا وَحُقَّتْ oإِذَا السَّمَاء انشَقَّتْ

oأَذِنَتْ لِرَبِّهَا وَحُقَّتْ وَأَلْقَتْ مَا فِيهَا وَتَخَلَّتْ

 

 

ترجمہ :


جب آسمان پھٹ جاۓ گا – اور اپنے رب کے حکم کی تعمیل کرے گا اور اس کے لئے حق یہی ہے –

 اور جب زمین پھیلا دی جاۓ گی- اور جو کچھ اس کے اندر ہے اسے باہر پھینک کر خالی ہو جاۓ گی –

 اور اپنے رب کے حکم کی تعمیل کرے گی اس کے لئے یہی بہتر ہے     

 

سورہ نمبر ٩٩، ال زلزلہ ، آیت نمبر ١ سے ٨

 

o وَقَالَ الْإِنسَانُ مَا لَهَا وَأَخْرَجَتِ الْأَرْضُ أَثْقَالَهَا oإِذَا زُلْزِلَتِ الْأَرْضُ زِلْزَالَهَا

بِأَنَّ رَبَّكَ أَوْحَى لَهَا oيَوْمَئِذٍ تُحَدِّثُ أَخْبَارَهَا

oفَمَن يَعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ خَيْرًا يَرَهُ oيَوْمَئِذٍ يَصْدُرُ النَّاسُ أَشْتَاتًا لِّيُرَوْا أَعْمَالَهُمْ

وَمَن يَعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ شَرًّا يَرَهُ


ترجمہ :



جب جب زمین اپنی پوری شدّت کے ساتھ ہلا دی جاۓ گی – اور زمین اپنے اندر کے سارے بوجھ

 نکال کر  باہر ڈال  دے گی – اور انسان کہے گا کہ اس کو  کیا ہو رہا  ہے – اس روز وہ اپنے حالات بیان

 کرے گی-  کیونکہ تیرے رب نے اسے ایسا کرنے کا حکم دیا ہو گا – اس روز لوگ الگ الگ گروہ میں

 تقسیم ہو جائیں گے تاکہ ان کے اعمال ان کو دکھائیں جاۓ گیں – پھر جس نے ذ رہ برابر نیکی کی

 ہوگی وہ اس کو دیکھ لے گا – اور جس نے ذ رہ برابر بدی کی ہوگی وہ بھی اسکو دیکھ لے گا     

 

سورہ نمبر ١٠١ ، القارعہ  ، آیت نمبر ١ سے ١١   

  

oوْمَ يَكُونُ النَّاسُ كَالْفَرَاشِ الْمَبْثُوث oوَمَا أَدْرَاكَ مَا الْقَارِعَةُمَا الْقَارِعَةُoالْقَارِعَةُ

فَأَمَّا مَن ثَقُلَتْ مَوَازِينُهُ وَتَكُونُ الْجِبَالُ كَالْعِهْنِ الْمَنفُوشِ

oفَأُمُّهُ هَاوِيَةٌ oوَأَمَّا مَنْ خَفَّتْ مَوَازِينُهُ oفَهُوَ فِي عِيشَةٍ رَّاضِيَةٍ

نَارٌ حَامِيَةٌ وَمَا أَدْرَاكَ مَا هِيَهْ


ترجمہ :



کھڑ کھڑ ا نے والی – کیسی ہے وہ کھڑ کھڑ ا نے والی-  تم کیا جانوں وہ کھڑ کھڑ ا نے والی کیا ہے – وہ

 ایسا دن ہوگا  کہ لوگ پریشان پروانوں کی طرح ہو جائیں گے – اور پہاڑ دھنکی ہوئی رنگین اون کی

 طرح – تو جس کے اعمال کا پڑلا بھاری ہوگا – وہ دل پسند عیش میں ہوگا – اور جس کا   ایمان کا پڑ لا

 ہلکا ہوگا – اسکا ٹھکانا ہاویہ ہوگا -  اور آپ  جانتے  ہیں کہ  ہاویہ کیا    ہے – وہ ایک دہکتی ہوئی آ  گ    ہے    



سورہ نمبر١٠٨  ، الکوثر  ، آیت ١ اور ٢  


 oفَصَلِّ لِرَبِّكَ وَانْحَرْ  oإِنَّا أَعْطَيْنَاكَ الْكَوْثَر 


ترجمہ :


ہم نے آپ کو کوثر عطا کی ہے تو آپ اپنے پروردگار کے لئے 


نماز پڑھا  کرئے اور قربانی دیا کرئے


تبصرہ :

جب یہ  سورت نازل ہوئی اسوقت نبی صلی اللہ و علیہ و سلم کو مکّہ میں بہت مشکلات کا سامنا کرنا پڑ

 رہا تھا کئی لوگوں کا رویا منفی تھا اور صرف   اعتراضات سے بھرپور تھا ،  اسلام قبول کرنے والوں کو

 بھی  تکلیفیں  پوہچائی جا رہی تھیں غرض اللہ کے رسول اور ان کے ساتھیوں کے لئے یہ ایک

 مشکل وقت تھا بعض اوقات آپ بڑے غمگین ہو جاتے تھے سورہ الکوثر   کے ذریعہ اللہ   نے نبی کو آگاہ

  کیا  کہ آپ کو مایوس نہ ہونا چاہئےکیونکہ ہم نے آپ کو  کوثر عطا کی ہے ( جنّت میں ایک نہر  ہے

 جس کا نام کوثر   ہے جو مرکزی تالاب سے پانی لائے گی ) روز جزا میں اللہ کے نبی اپنے اُمّتییوں کو کوثر

 کا پانی پلائیں گے جب کوئی  مومن  اس کو پئے گا تو اسکو حشر کے میدان میں ہمیشہ کے لئے  پیاس

 نہیں لگے گی محمّد (صلی اللہ و علیہ و سلم ) نے یہ بھی بتایا ہے کہ کوثر کا پانی دودھ سے

 زیادہ سفید ، برف  سے ٹھنڈا، شہد سے میٹھا اور مشک سے زیادہ خوشبو والا ہے اللہ

 کے رسول نے یہ بھی بتایا کہ حشر کے میدان میں فرشتے  کچھ اُمّصتیوں کو

 نہر کوثر   کے قریب آنے پر  نکال د ینگے تو اللہ کے رسول کے پوچھنے پر فرشتے جواب دینگے

 کہ اللہ کے رسول یہ وہ لوگ ہیں جنھوں نے آپکے لائے ہوئے دین میں تبدیلیاں کی

 تھیں اور اپنی طرف سے کچھ اور باتیں شامل کر لی  تھیں اس پر اللہ کے رسول

 بھی ان لوگوں کو نہر   کوثر   سے دور کرنے کا حکم دینگے

( بخاری، مسلم، احمد، ابو داود، اور ابن ماجہ )

 

If you have any feedback please revert to:  arifrk43@gmail.com