Ramadan (Ramzan)- FASTING

ماہ رمضان یا رامادان 


What is Ramadan (Ramzan)

This is the fourth fundamental principle of Islam. Ramadan is the Ninth month of the Islamic calendar which begins with the sighting of the new moon. Ramadan is a special month of the year for 1.6 billion Muslims globally, which is widely respected. This month is a kind of tuning for the spiritual lives.The Fasting has many special benefits. During the daylight hours of fasting, strength is gained to one's spiritual nature, which becomes a means of coming closer to Allah.


Quran Verses about Ramadan & Fasting



Surah No.2 Al Baqr ,Ayats No. 183 to 184
يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُواْ كُتِبَ عَلَيْكُمُ الصِّيَامُ كَمَا كُتِبَ عَلَى الَّذِينَ مِن قَبْلِكُمْ
o لَعَلَّكُمْ تَتَّقُونَ
أَيَّامًا مَّعْدُودَاتٍ فَمَن كَانَ مِنكُم مَّرِيضًا أَوْ عَلَى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ أَيَّامٍ أُخَرَ وَعَلَى

الَّذِينَ يُطِيقُونَهُ فِدْيَةٌ طَعَامُ مِسْكِينٍ فَمَن تَطَوَّعَ خَيْرًا فَهُوَ خَيْرٌ لَّهُ وَأَن تَصُومُواْ

o خَيْرٌ لَّكُمْ إِن كُنتُمْ تَعْلَمُونَ
Translation :

O believers ! Fasting is prescribed for you, as it was prescribed for those before you, that you may learn self control ; Fasting for a certain number of days; But for those who are sick , or on a journey, you may fast later for same number of days; and for those who can do it (but do not fast) there is a ransom: they can feed a poor man (for one fast) - but whatever he does good ,is better for him: and that if you fast then it is better for you, if you knew -

Surah No.2 , Al Baqr , Ayat No.185

شَهْرُ رَمَضَانَ الَّذِيَ أُنزِلَ فِيهِ الْقُرْآنُ هُدًى لِّلنَّاسِ وَبَيِّنَاتٍ مِّنَ الْهُدَى وَالْفُرْقَانِ فَمَن شَهِدَ مِنكُمُ الشَّهْرَ فَلْيَصُمْهُ وَمَن كَانَ مَرِيضًا أَوْ عَلَى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ أَيَّامٍ أُخَرَ يُرِيدُ اللّهُ بِكُمُ الْيُسْرَ وَلاَ يُرِيدُ بِكُمُ الْعُسْرَ وَلِتُكْمِلُواْ الْعِدَّةَ وَلِتُكَبِّرُواْ اللّهَ عَلَى مَا هَدَاكُمْ وَلَعَلَّكُمْ تَشْكُرُونَ

Translation :

The month of Ramadan in which We have sent down Holy Quran , a guidance for mankind, exhibit clear proofs of the guidance, which shows path of right and wrong. And whosoever finds this month, let him fast for the whole month, and whosoever of you is sick or on a journey, (let him fast for the same) number of other days. Allah Desires for you ease; He does not put you to hardship ; and He desires you to fast for the month , and that you should magnify Allah for having guided you, and that you may be thankful to Him.

Comments :

Earlier, the Prophet (saws) had asked the companions to fast for three days only. The guideline for Ramadan came in 2 AH ,thereafter fasting for one complete month was prescribed. It was relaxed for sick persons( pregnant women, suckling women and for old persons who did not have strength for fasting ) and travelers, but everyone of them were asked to do it on other days when they are able to do it.
In the start there was a relaxation for those who have strength to do it but do not fast, they can feed a poor man per fast (Quran 2: 184 ).
Later on this was modified and the relaxation was withdrawn by Allah : (Quran 2:185 )
Who can Fast in Ramadan?
Fasting in Ramadan is obligatory on all the adults Muslims.The people who are exempted from the fast are sick people , travelers ,pregnant women ,suckling mothers, the women during menses and old people but they must make it up when they are able.
Hadis :
Narrated `A'ishah (ra) said: "When we would have our periods during the lifetime of the Prophet (saws), we were ordered to make up for the days of fasting that we had missed"
(Al-Bukhari and Muslim)
 
 

FIDYA (COMPENSATION) 

Any person who cannot fast because of old age or some serious illness, for which there is no cure, should give Fidya for every Fast that they have missed.  The amount that should be given as Fidya is as follows : 
1 One kg and 700 g of wheat or its value.
2 Two meals or its value. 
 Fidya should be offered in Ramadan and not before that.


Any one of these two should be given to a poor person. Please note that the amounts stated above is per Fast. So if a person has missed 30 Fasts, then any one of the above provision that a person wishes to give, should be multiplied by 30! 

 

How and What to do during fasts and what are prohibitions
The daily period of fasting starts at the breaking of dawn and ends at the setting of the sun. One should have a pre fast meal before breaking of dawn which is known as Sahri. The fast ends at sunset when one should have post fast meal called as Iftar.
  • The fasting person must spend his day with intensive worship .
  • Reciting Salat (Namaz) Five times at prescribed time.
  • Reciting Nafil Salats like Tahajjud , Ishraq , Chasht and Awwabeen
  • Reading of the Quran
  • Reciting Salate Tarawih after Salate Isha but before Witr ( which is in other words a worship in the night of Ramzan )
  • During the month giving charity (Zakat and Fidya), purifying one's behavior, and doing good deeds should be done.
  • During fast one must abstain from food, drink, smoking, sex , avoid telling lies, avoid anger and quarelling the other people.
  • Must involve oneself in remebrance of Allah ( Zikr)
  • Must avoid quarrel ( arguments)
  • The tongue must be kept free from backbiting and gossip. The control on eyes must be excercised for looking at unlawful things. The hand must not touch or take anything that does not belong to it. The ears must not listen to idle talk or abusing words. The feet must refrain from going to sinful places. In such a way, every part of the body observes the fast.
Therefore, fasting is not merely physical, but is rather the total commitment and submission to the will of Allah. As a secondary goal, fasting is a way of experiencing hunger and developing sympathy for the poor, and paying thankfulness for all the Allah's bounties. Fasting is also beneficial to health and provides a break in the cycle of rigid habits of overeating.
Surah No.2,Al Baqr ,Ayat No.187

أُحِلَّ لَكُمْ لَيْلَةَ الصِّيَامِ الرَّفَثُ إِلَى نِسَآئِكُمْ هُنَّ لِبَاسٌ لَّكُمْ وَأَنتُمْ لِبَاسٌ لَّهُنَّ عَلِمَ اللّهُ أَنَّكُمْ كُنتُمْ تَخْتانُونَ أَنفُسَكُمْ فَتَابَ عَلَيْكُمْ وَعَفَا عَنكُمْ فَالآنَ بَاشِرُوهُنَّ وَابْتَغُواْ مَا كَتَبَ اللّهُ لَكُمْ وَكُلُواْ وَاشْرَبُواْ حَتَّى يَتَبَيَّنَ لَكُمُ الْخَيْطُ الأَبْيَضُ مِنَ الْخَيْطِ الأَسْوَدِ مِنَ الْفَجْرِ ثُمَّ أَتِمُّواْ الصِّيَامَ إِلَى الَّليْلِ وَلاَ تُبَاشِرُوهُنَّ وَأَنتُمْ عَاكِفُونَ فِي الْمَسَاجِدِ تِلْكَ حُدُودُ اللّهِ فَلاَ تَقْرَبُوهَا كَذَلِكَ يُبَيِّنُ اللّهُ آيَاتِهِ لِلنَّاسِ لَعَلَّهُمْ يَتَّقُونَ

Translation :

You are permitted to go to your wives on the night of the fast. They are garments for you and you are garments for them. Allah is Aware what you used to do secretly among yourselves ; He has turned toward you and pardoned you. So hold intercourse with them and seek what Allah has permitted you .

Eat and drink until the white thread becomes visible to you from the dark thread of the night ( subah Sadiq). Then strictly observe the fast till night appears(until sun set ) . Do not touch them (Your Wives) when you are confined to the mosques ( Etekaaf during last ten days of Ramadan ). These are the limits set by Allah, so do not approach them ( your Wives) . Thus Allah make clear His signs to men ; that they may learn restraint (Sabr) .

 

Praying at Night in Ramadaan (Taraweeh)


 

Volume 3, Book 32, Number 227: of Bukhari Sharif 

                            

Narrated Abu Huraira (ra):

 

Allah's Apostle said, "Whoever prayed at night the whole month of Ramadan out of sincere Faith and hoping for a reward from Allah, then all his previous sins will be forgiven." Ibn Shihab (a sub-narrator) said, "Allah's Apostle died and the people continued observing that (i.e. Nawafil offered individually, not in congregation), and it remained as it was during the Caliphate of Abu Bakr and in the early days of 'Umar's Caliphate." 'Abdur Rahman bin 'Abdul Qari said, "I went out in the company of 'Umar bin Al-Khattab one night in Ramadan to the mosque and found the people praying in different groups. A man praying alone or a man praying with a little group behind him. So, 'Umar said, 'In my opinion I would better collect these (people) under the leadership of one Qari (Reciter) (i.e. let them pray in congregation!)'. So, he made up his mind to congregate them behind Ubai bin Ka'b. Then on another night I went again in his company and the people were praying behind their reciter. On that, 'Umar remarked, 'What an excellent Bid'a (i.e. innovation in religion) this is; but the prayer which they do not perform, but sleep at its time is better than the one they are offering.' He meant the prayer in the last part of the night. (In those days) people used to pray in the early part of the night."

 

--------------------------------------------------------------------------------------------

 

Volume 3, Book 32, Number 228: of Bukhari Sharif

Narrated 'Aisha:

 

(the wife of the Prophet) Allah's Apostle used to pray (at night) in Ramadan.

 

----------------------------------------------------------------------------------------

 

Volume 3, Book 32, Number 230: of Bukhari Sharif 

                               

Narrated Abu Salama bin 'Abdur Rahman:

 

that he asked 'Aisha "How was the prayer of Allah's Apostle in Ramadan?" She replied, "He did not pray more than eleven Rakat in Ramadan or in any other month. He used to pray four Rakat ---- let alone their beauty and length----and then he would pray four ----let alone their beauty and length ----and then he would pray three Rakat (Witr)." She added, "I asked, 'O Allah's Apostle! Do you sleep before praying the Witr?' He replied, 'O 'Aisha! My eyes sleep but my heart does not sleep."

 

------------------------------------------------------------------------------------------

Book 004, Number 1662: Muslim Sharif

 

 Abu Huraira (ra) reported Allah's Messenger (saws) as saying: He who observed prayer at night during Ramadan, because of faith and seeking his reward from Allah, his previous sins would be forgiven.

 

----------------------------------------------------------------------------------------

 

 Book 004, Number 1667: Muslim Sharif 

 

 'A'isha (ra) reported: The Messenger of Allah (saws) came out during the night and observed prayer in the mosque and some of the people prayed along with him. When it was morning the people talked about this and so a large number of people gathered there. The Messenger of Allah (saws) went out for the second night, and they (the people) prayed along with him. When it was morning the people began to talk about it. So the mosque thronged with people on the third night. He (the Holy Prophet) came out and they prayed along with him. When it was the fourth night, the mosque was filled to its utmost capacity but the Messenger of Allah (may peace be upon him) did not come out. Some persons among then cried:" Prayer." But the Messenger of Allah (may peace be upon him) did not come to them till he came out for the morning prayer. When he had completed the morning prayer, he turned his face to the people and recited Tashahhud (I bear testi- mony that there is no god but Allah and I bear testimony that Mohammad (saws) is His Messenger and then said : Your affair was not hidden from me in the night, but I was affraid that might make the night prayer obligatory for you and you might be unable to perform it.

-----------------------------------------------------------------------

'Prayer in Ramadan' from Hadis Book of Malik's Muwatta.

 6.1.1

 A'isha, (ra ) narrated  that the Messenger of Allah (saws),  prayed in the mosque one night and people prayed behind him. Then he prayed the next night and there were more people. Then they gathered on the third or fourth night and the Messenger of Allah (saws),  did not come out to them. In the morning, he said, "I saw what you were doing and the only thing that prevented me from coming out to you was that I feared that it would become obligatory (farz) for you." This happened in Ramadan. 

------------------------------------------------------------------------------------------

Comments :

The above Ahadis clearly show that Qiyam is a part of Ramadan and when Tarawih is recited, it will naturally be a part of it . Whoever volunteers in these prayers, will get the reward Insha'Allah. It is therefore very important that one should not enter any kind of controversy regarding reciting the Tarawih salat and its total number of rakaats. One should keep in mind that we have to perform worship in the night of the month of Ramzan to obey the Prophet and to seek forgiveness and blessings from Allah.

 

Shab-e-Qadr or lailatul Qadr ( The Night of Power)



Surah No. 97 , Al Qadr , Ayats No.1 to 5



oوَمَا أَدْرَاكَ مَا لَيْلَةُ الْقَدْرِ o إِنَّا أَنزَلْنَاهُ فِي لَيْلَةِالْقَدْرِ

o لَيْلَةُ الْقَدْرِخَيْرٌ مِّنْ أَلْفِ شَهْرٍ

oتَنَزَّلُ الْمَلَائِكَةُ وَالرُّوحُ فِيهَابِإِذْنِ رَبِّهِم مِّن كُلِّ أَمْرٍ

o سَلَامٌ هِيَ حَتَّى مَطْلَعِ الْفَجْرِ



Translation :



We have indeed revealed this ( Quran ) in the Night of Power (Night of Al Qadr ): And what will make you know what the Night of Power ( Night of Qadr) is ? The Night of Power is better than a thousand Months. Therein the angels and the Spirit ( Jibraeel) come down on the earth by Allah's permission, with all decrees : (All that Night )there is Peace until the appearance of dawn.



Surah No. 44 , Ad Dukhan , Ayats No.2 to 4

o وَالْكِتَابِ الْمُبِينِ

o إِنَّا أَنزَلْنَاهُ فِي لَيْلَةٍ مُّبَارَكَةٍ إِنَّا كُنَّا مُنذِرِينَ

o فِيهَا يُفْرَقُ كُلُّ أَمْرٍ حَكِيمٍ

Translation :



By this Book ,which makes things clear , We sent it down ( this Quran) during a blessed night ( in the night of Qadr): In fact ! We wish to warn (the mankind ). In this night all affair of wisdom are made crear .

Hadis :

Volume 3, Book 32, Number 237: Sahi Bukhari Sharif

1.   Narrated 'Aisha:
Allah's Apostle used to practice Etekaf in the last ten nights of Ramadan and used to say, "Look for the Night of Qadr in the last ten nights of the month of Ramzan ,"

Volume 3, Book 32, Number 234: Sahi Bukhari Sharif
2.  Narrated 'Aisha:
Allah's Apostle said, "Search for the Night of Qadr in the odd nights of the last ten days of Ramadan."

Comments :

This is one of the holiest and most blessed nights . During this night, the angels and the spirit [Jibraeel (as)] descends in the proximity of the Earth. This night is full of reward and blessing and is equivalent to a thousand months of worship. Anyone who takes part in Laylatul Qadr will have worshipped an equivalent to eighty three years and four months ( 1000 months). In this night the Holy Quran was sent down from LAOH-E-MEHFOOZ (the Preserved Tablet) to the EARTH .

Laylat al-Qadr is to be found in the last 10 nights of Ramadan. There is no history in the Quran as to when the specific date is ? HOWEVER :

The Messenger of Allah (saws) told us to search for Shab-e-Qadr in the odd numbered nights, in the last ten days of Ramzan. So, the 21st, 23rd, 25th, 27th or 29th night of Ramadan could be Shab-e-Qadr.

Hazrat Aisha (ra) stated that the Prophet Mohammad (saws) used to do Ibadat in the last Ashra (ten days) of Ramadan (Ramzan)," (Muslim)

If a person wants to obey his Lord, increase the good deeds in his record and have all past sins forgiven, they should take part in Laylatul Qadr.

Whoever stays up (in prayer and remembrance of Allah) on the Night of Qadr fully believing (in Allah’s promise of reward for that night) and hoping to seek reward (from Allah alone and not from people), he shall be forgiven for his past sins.” Sahih Hadith Bukhari / Muslim

How to worship in this Night :

Here are a few suggestions to worship in Laylatul Qadr :

  • One must prepare himself mentally that he will be worshipping in Laylatul Qadr.

  • Recite salat-e-Tarawih and thereafter, while performing Nafil salats take regular breaks to avoid getting over-exhausted.

  • Try switching between different forms of worship .

  • Recitation of the Qur'an must be continued .

  • Remembrance of Allah (Zikr) will be another form of worship to be performed .

  • Social gatherings and meaningless talk should be avoided .



May Allah help us to purify our hearts, strengthen our faith and help us to worship in all the required nights of the last Ashra of the holy month.

Some Important Features

According to Darul Uloom Deoband ( India ):
1. During a fast, if a person becomes seriously ill and the doctor advices for immediate treatment ,the person can break the fast and when able ,can complete the count.
2. During a fast , a person can clean the teeth with Miswak but should not clean them with tooth paste and tooth brush .

Fidya (Compensation for Not Fasting)

Eldery, sick and handicapped persons, if they are unable to fast, a compensation must be given by feeding a poor person for every day of fasting not observed. However, the young and healthy individuals, if they are sick or traveling they must make up their fasts.

The price of Fidya for each day of missed fasts is either to feed a poor person two meals in a day, or to give whole wheat, which is enough to feed a poor person twice in a day (1/2 Saa per Hanafi school of thought means 1.75 Kilograms.

The Fidya price for one who has to pay it should be calculated based on the local prices of whole wheat at the place where the person is residing.


What is Sadqah al Fitr


 Sadaqah al-Fitr is a duty which is Waajib on every Muslim, whether male or female, minor or adult as long as he/she has the means to do so. This form of charity is compulsory which is reported by Ibn Umar that the Prophet (saws) made Sadqah al Fitr compulsory on those Muslims who have means to do it. 

It is payable by the head of the family on behalf of each family member under his/her care. It may include a spouse or children who are already able to support themselves and should include elderly parents living with the family. Fitra is the annual compulsory charity that every Muslim pays to ensure that all Muslims are able to enjoy the day of Eid.

How much Sadaqatul Fitr should one give?

A person should give  ½ sa’ of wheat. Now one should know,  how much is ½ Sa’ ?

It is 1.75 Kg. OR its Market value if some one likes to convert into cash. It should be given to the poor Muslims, narrated by Ibn ‘Abbaas (ra), that “The Messenger of Allaah (saws) said that sadqatul fitr, to be paid in Ramadaan and before the Eid Salat to feed the poor. It is not permissible to spend it on building a mosque or other charitable projects. 


FASTING ON THE DAY OF 'ASHURA (10TH OF MOHARRAM)

 Comments :

Fasting on Moharram 10, known as the Day of 'Ashura', expiates for the sins of the past year. When the Prophet (saws) was in Mecca he found that Quraish used to fast on the day of 'Ashura in the pre-Islamic days and the Messenger ot Allah (saws) also observed it.

When the Prophet (saws) arrived in Madinah in 622 CE, he found that the Jews fasted on Moharram 10 and asked them the reason for their fasting on this day. They said," This is a blessed day. On this day Allah saved the Children of Israel from their enemy (in Egypt) and so Prophet Musa [Moses] who fasted on this day giving thanks to Allah." The Prophet (saws) said,  "We are closer to Musa than you are." He fasted on that day and commanded Muslims to fast on this day. The Messenger of Allah (saws) also said: When the next year comes, we would observe fast on the 9th.  Since it was a desire of the prophet the followers do observe fast on 9th of Moharram as a sunnah. However, 10th of Moharram remains fasting day of Ashura and 9th of Moharram fast will be an additional fast . 

The following year, Allah commanded the Muslims to fast the month of Ramadan, and the fasting of 'Ashura' became optional.   


Book 006,  Sahih Muslim :

Hadis No. : 2499

Hazrat 'A'isha (Allah be pleased with her) reported that the Quraish used to fast on the day of 'Ashura in the pre-Islamic days and the Messenger ot Allah (may peace be upon him) also observed it. When he migrated to Medina, he himself observed this fast and commanded (others) to observe it. But when fasting during the month of Ramadan was made obligatory he said: He who wishes to observe this fast may do so, and he who wishes to abandon it may do so.


Book No.31  Sahaih Bukhari


Hadis no. 117

Narrated 'Aisha: (The tribe of) Quraish used to fast on the day of Ashura' in the Pre-lslamic period, and then Allah's Apostle ordered (Muslims) to fast on it till the fasting in the month of Ramadan was prescribed; whereupon the Prophet said, "He who wants to fast (on 'Ashura') may fast, and he who does not want to fast may not fast." 

______________________________________________

ماہ رمضان  یا  ماہ رمادان 

یہ اسلام کا چوتھا اہم رکن ہے اور یہ اسلامک کیلنڈر کا نوا مہینہ بھی ہے یہ مہینہ بھی پہلا چاند دکھنے پر شروع ہوتا ہے پوری دنیا کے ١٦٠  کروڑ مسلمانوں کے لئے یہ بہت عزت والا مہینہ ہے یہ ماہ روح کو تازگی بخشتا ہے روزہ رکھنے کے بہت زیادہ  خاص فوائد ہیں، روزہ رکھنے سے روحانیت طاقت ملتی ہے جو الله کے قرب کا ذریعہ بنتی ہے  

رمضان اور روزہ کے بارے میں قرآن کی آیتیں

سوره نمبر ٢، البقر، آیت نمبر ١٨٣

ا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُواْ كُتِبَ عَلَيْكُمُ الصِّيَامُ كَمَا كُتِبَ عَلَى الَّذِينَ مِن قَبْلِكُمْ

o لَعَلَّكُمْ تَتَّقُونَ

أَيَّامًا مَّعْدُودَاتٍ فَمَن كَانَ مِنكُم مَّرِيضًا أَوْ عَلَى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ أَيَّامٍ أُخَرَ وَعَلَى

الَّذِينَ يُطِيقُونَهُ فِدْيَةٌ طَعَامُ مِسْكِينٍ فَمَن تَطَوَّعَ خَيْرًا فَهُوَ خَيْرٌ لَّهُ وَأَن تَصُومُواْ

o خَيْرٌ لَّكُمْ إِن كُنتُمْ تَعْلَمُونَ

ترجمہ

اے ایمان والوں تم پر روزے فرض کر دئے گئے جس طرح پہلے انبیا کے پیروؤں پر فرض کئے گئے تھے اسلئے کہ تم تقوی حاصل کرو  -چند مقررہ دنوں کے روزے ہیں ؛ لیکن جو لوگ بیمار ہیں یا سفر میں ہیں تو پھر بعد میں تعداد پوری کرے جو لوگ قدرت رکھتے ہیں (اور نہ رکھیں) تو فدیہ دیں ایک روزے کا فدیہ ایک مسکین کو کھانا کھلانا ہے اور جو اپنی خوشی سے زیادہ بھلائی کرے تو یہ اسی کے لئے بہتر ہے لیکن اگر تم سمجھو تو تمھارے حق میں یہ اچھا ہے کہ تم روزہ رکھو   

سوره نمبر ٢، البقر، آیت نمبر ١٨٥

شَهْرُ رَمَضَانَ الَّذِيَ أُنزِلَ فِيهِ الْقُرْآنُ هُدًى لِّلنَّاسِ وَبَيِّنَاتٍ مِّنَ الْهُدَى وَالْفُرْقَانِ فَمَن شَهِدَ مِنكُمُ الشَّهْرَفَلْيَصُمْهُ وَمَن كَانَ مَرِيضًا أَوْ عَلَى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ أَيَّامٍ أُخَرَ يُرِيدُ اللّهُ بِكُمُ الْيُسْرَ وَلاَ يُرِيدُ بِكُمُ الْعُسْرَوَلِتُكْمِلُواْ الْعِدَّةَ وَلِتُكَبِّرُواْ اللّهَ عَلَى مَا هَدَاكُمْ وَلَعَلَّكُمْ تَشْكُرُونَ

ترجمہ

رمضان وہ مہینہ ہے جس میں قرآن پاک نازل کیا گیا جو انسانوں کے لئے سراسر ہدایت ہے جو صاف صاف ہدایتیں بیان کرتی ہے اور حق اور باطل کا راستہ بتاتی  ہیں  –جس کو بھی یہ مہینہ ملے تو وہ پورے ماہ کے روزے رکھے اگر آپ میں کوئی بیمار ہو یا سفر کر رہا ہو تو دوسرے دنوں میں تعداد پوری کرے الله تمھارے ساتھ نرمی کرنا چاہتا ہے سختی کرنا نہیں چاہتا  تاکہ تم روزوں کی تعداد پوری کر سکو اور جس ہدایت سے الله نے تمہے سرفراز کیا ہے تو اسپر الله کی کبریائی کا اظہار و اعتراف کرو اور شکر گزار بنو   

تبصرہ

رمضان کے روزے نازل ہونے سے پہلے الله کے رسول(صلی علیہ و سلم ) نے صحابہ سے تین روزے رکھنے کے بارے میں فرمایا تھا رمضان کے روزے کے احکامات ٢،ہجری میں نازل ہوئے اس کے بعد ایک ماہ کے روزے رکھنے کا حکم آگیا –اس میں کچھ لوگوں کو جیسے بیمار، مسافر، حاملہ عورت، دودھ پلانے والی ماں اور ایسی عورت جو حیض کے دنوں میں ہو  ان کو  بعد میں تعداد  پوری کرنے کا حکم ہے صرف بزرگوں کے علاوہ جن میں بلکل طاقت نہ ہو .

شروع میں روزہ نہ رکھنے کی ریایت قدرت رکھنے والوں کو دی گئی تھی اور فدیہ دینے کا حکم تھا  (قرآن البقر آیت ١٨٤) لیکن بعد میں اس کو منسوخ کر دیا گیا  (قرآن البقر آیت نمبر ١٨٥) 

 

رمضان کے روزے کون رکھ سکتا ہے ؟

تمام بالغ مسلمانوں پر رمضان کے روزے فرض ہیں جن لوگوں کو ریایت دی گئی ہے وہ ہیں ،بیمار، مسافر، حاملہ خواتین، دودھ پلانے والی خواتین، حا یضہ خواتین اور بزرگ لیکن ان لوگوں کو بعد میں تعداد پوری کرنے کا حکم ہے   

حدیث

حضرت عائشہ(رضی) سے روایت ہے کہ الله کے رسول کی زندگی میں جب بھی ہماری حالت حیض کی ہوتی تو یہ حکم ہوتا کہ ہم روزے کے کی قضا پوری کریں اور نماز کی قضا کا حکم نہ ہوتا 

حدیث نمبر ٦٧١، صحیح مسلم


Hadis :

Narrated `A'ishah (ra) said: "When we would have our periods during the lifetime of the Prophet (saws), we were ordered to make up for the days of fasting that we had missed and not to make up salat that we missed during periods.

Hadis No.671, Sahih Muslim

 فدیہ

لمبی بیماری یا زیادہ عمر ہونے کی وجہ سے کوئی شخص اگر روزہ نہ رکھ سکتا ہو تو فدیہ دینا بہتر ہوگا – ہر ایک روزے کے اعوذ میں ایک کلو سات سو گرام گیہوں یا اتنی قیمت کی رقم یا دو وقت کا کھانا یا اتنی رقم کسی ضرورتمند کو رمضان شروع ہونے پر دے  

 روزہ رکھنے کا طریقہ اور اس میں کیا منع ہے

روزہ صبح صادق کے وقت سے شروع ہوتا ہے اور غروب آفتاب پر ختم ہوتا ہے روزہ شروع کرنے کے لئے صبح صادق سے پہلے سحری کرنے کا حکم ہے اور جب روزہ پورا ہوتا ہے تو اس وقت افطار کیا جاتا ہے

·      رمضان کے روزے رمضان کے ماہ کی پہلی تاریخ سے شروع کئےجاتے ہیں

·      روزہ دار کو عبادت میں اپنا وقت لگانا ہوتا ہے

·        روزہ دار کو  پانچ وقت کی نماز کے ساتھ نفل نمازیں جیسے تہجّد، اشراق اور اوابین پڑھنا چاہئے

·      قرآن کی تلاوت بھی افضل ہے

·      روزہ دار ، رات کی عبادت جیسے نماز تراویح ادا کرے

·      جو لوگ صاحب نصاب ہیں اس ماہ میں زیادہ صدقہ ادا کریں (ذکات اور نفل صدقہ) ، اچھے اخلاق کا اظہار اور دیگر نیکیاں کرنا  اور الله کا ذکر کرنا اہم ہے

·       روزے کی حالت میں کھانا، پینا، بیڑی یا سگریٹ کا پینا، بیوی سے مباشرت کرنا، جھوٹ بولنا، غصّہ کرنا اور لڑائی جھگڑا کرنا سخت منع ہے

·       روزے دار کو زبان پر قابو رکھنا جیسے کسی کی غیبت اور چغلی نہ کھائے ، اور  اپنی آنکھوں کو قابو میں رکھے ، کانوں کو  کسی کی برائی سننے سے بچاۓ

·      روزہ دار کے قدم گناہوں کی  جگہ پر نہ جائیں

اس طرح روزہ دار کا پورا جسم قابو میں رہے- روزہ دراصل الله اور بندے کے درمیان ایک اقرار نامہ ہے یہ ایک تجربہ ہے جو بھوکے رہنے سے غریبوں کی ہمدردی سکھاتا ہے  روزہ الله کی نعمتوں کا ذریعہ بھی بنتا ہے  یہ صحت مند رہنے میں مدد کرتا ہے   

سوره نمبر ٢، البقر، آیت نمبر ١٨٧

أُحِلَّ لَكُمْ لَيْلَةَ الصِّيَامِ الرَّفَثُ إِلَى نِسَآئِكُمْ هُنَّ لِبَاسٌ لَّكُمْ وَأَنتُمْ لِبَاسٌ لَّهُنَّ عَلِمَ اللّهُ أَنَّكُمْ كُنتُمْ تَخْتانُونَ أَنفُسَكُمْ فَتَابَ عَلَيْكُمْ وَعَفَا عَنكُمْ فَالآنَ بَاشِرُوهُنَّ وَابْتَغُواْ مَا كَتَبَ اللّهُ لَكُمْ وَكُلُواْ وَاشْرَبُواْ حَتَّى يَتَبَيَّنَ لَكُمُ الْخَيْطُ الأَبْيَضُ مِنَ الْخَيْطِ الأَسْوَدِ مِنَ الْفَجْرِ ثُمَّ أَتِمُّواْ الصِّيَامَ إِلَى الَّليْلِ وَلاَ تُبَاشِرُوهُنَّ وَأَنتُمْ عَاكِفُونَ فِي الْمَسَاجِدِ تِلْكَ حُدُودُ اللّهِ فَلاَ تَقْرَبُوهَا كَذَلِكَ يُبَيِّنُ اللّهُ آيَاتِهِ لِلنَّاسِ لَعَلَّهُمْ يَتَّقُونَ

ترجمہ

تمہارے لئے روزوں کے دنوں میں رات میں  تمہاری بیویوں کے پاس جانا  حلال کر دیا گیا –وہ تمہارے لئے لباس ہیں اور تم انکے لئے –الله کو معلوم ہو گیا کہ تم لوگ چپکے چپکے اپنے آپ سے خیانت کر رہے تھے مگر اس نے تمہارا قصور معاف کر دیا اور تم سے درگزر فرمایا اب تم اپنی بیویوں کے ساتھ شب باشی کرو اور جو  لطف الله نے تمہارے لئے  جائز کر دیا ہے اسے حاصل کرو –نیز راتوں کو کھاؤ پیو یہاں تک کے تم کو سیاہی شب کی دھاری سے سپیدہ صبح کی دھاریاں نظر آ جاۓ تب یہ سب کام چھوڑ کر رات تک روزہ پورا کرو اور جب تم مسجدوں میں معتکف ہو تو بیویوں سے مباشرت نہ کرو –یہ الله کی باندھی ہوئی حدیں ہیں ان کے قریب نہ پھٹکنا-الله اپنے احکامات صاف بیان کرتا ہے تاکہ تم صبر کرنے سیکھو 

رمضان کی راتوں میں عبادت

کچھ احادیث بیان کی جا رہی ہیں جن کی رو سے رمضان کی راتوں میں عبادت کی اہمیت ظاہر ہو  

 احادیث

·      حضرت ابو ہریرہ (رضی الله و تعالہ عنہو ) سے روایت ہے کہ نبی اکرم (صلی الله و  علیہ و سلم ) نے فرمایا " جو شخص رمضان کی راتوں میں پورے مہینے عبادت کرے تو اسکے پچھلے گناہ معاف کر دیئے جائنگے " ابن شہاب نے کہا " کہ الله کے رسول کے بعد بھی  اکیلے نفل نمازے پڑھنے کا سلسلہ حضرت ابو بکر کے دور میں اور حضرت عمر کے شروع کے دور میں جاری رہا – حضرت عبدالرحمن بن عبدلقاری نے فرمایا " میں رمضان  کے مہینے کی ایک رات میں حضرت عمر بن خطاب کے ہمراہ مسجد کی طرف گیا تو پایا کہ لوگ الگ الگ ٹکڑوں میں عبادت کر رہے ہیں یا تو ایک آدمی اکیلا یا ایک آدمی کے پیچھے کچھ لوگ نماز ادا کر رہے ہیں " پھر حضرت عمر نے کہا " میرے خیال میں ، میں لوگوں کو جما ع کر کے ایک امام کے پیچھے عبادت کر نے کے لئے کہوں " انہوں نے سب لوگوں کو ابی بن کعب کی قیادت میں جما ع کیا  اور با جماعت عبادت شروع کرا دی " اسکے بعد دوسری رات میں بھی میں انہی کے ساتھ گیا تو دیکھا کہ لوگ ایک امام کے پیچھے نماز ادا کر رہے ہیں – اس دن حضرت عمر نے کہا "  کیا خوب بدعت ہے یہ " لیکن یہ عبادت زیادہ اچھی ہے با  نسبت اس کے کہ لوگ گھروں میں جاکر سو جایئں – ان کا کہنا تھا  "وہ عبادت جو رات کے آخری حصّے میں کی جاۓ "

(جلد نمبر ٣،کتاب نمبر ٣٢ ، حدیث نمبر ٢٢٧ ، صحیح بخاری)

 

·      حضرت عائشہ(رضی الله و تعالہ عنہا ) نے فرمایا کہ الله کے رسول (صلی الله و  علیہ و سلم ) رمضان کی راتوں میں عبادت کیا کرتے تھے

(جلد نمبر ٣، کتاب نمبر ٣٢،حدیث نمبر ٢٢٨، صحیح بخاری)

 

·      حضرت ابو سلاما بن عبدر رحمن  نے حضرت عائشہ (رضی الله و تعالہ عنہا ) سے پوچھا " کہ الله کے رسول رمضان میں کس طرح عبادت کیا کرتے تھے ؟"  انہوں نے جواب دیا  " الله کے رسول نے گیارہ رکعت سے زیادہ نہیں پڑھی --- وہ چار رکعت پڑھتے –ان کی خوبصورتی ان کی لمبائی ہوتی- پھر وہ چار رکعت ادا کرتے –ان کی خوبصورتی انکی لمبائی ہوتی اور اس کے بعد وہ تین رکعت (وتر)  پڑھتے – حضرت عائشہ نے اور بتایا " کہ میں نے پوچھا ' یا رسول الله ! وتر پڑھنے سے قبل کیا آپ سوتے ہیں ؟ آپ نے جواب دیا " او عائشہ ! میری آنکھیں سوتی ہیں لیکن دل نہیں سوتا "

(جلد  نمبر ٣، کتاب نمبر ٣٢، حدیث نمبر ٢٣٠، صحیح بخاری)   

·      حضرت ابو ہریرہ (رضی الله و تعالہ عنہو ) سے روایت ہے کہ نبی اکرم (صلی الله و  علیہ و سلم) نے فرمایا :  جس کسی شخص نے رمضان کے مہینے میں رات میں عبادت کی الله کے انعام کو پانے کی یقین کے ساتھ ، الله اس کے پچھلے گناہ معاف کردیتا ہے .

(کتاب نمبر ٤، حدیث نمبر ١٦٦٢ :  مسلم شریف) 

 

·      حضرت عائشہ (رضی الله و تعالہ عنہا ) نے بتایا  : ایک رات میں نبی اکرم (صلی الله و  علیہ و سلم) باہر  آئے اور مسجد میں نماز پڑھی کچھ لوگوں نے بھی ان کے ساتھ نماز پڑھی – جب صبح ہوئی تو لوگوں میں اس بابت بات ہوئی دوسری رات میں الله کے نبی کے ساتھ کافی لوگوں نے عبادت کی – جب صبح ہوئی تو پھر لوگوں میں اس بابت چرچا ہوئی تیسری رات میں مسجد میں بہت زیادہ لوگ جمع ہو گئے الله کے نبی مسجد میں آئے اور سب کے ساتھ نماز پڑھی – چوتھی رات میں مسجد لوگوں سے پوری بھر گئی لیکن الله کے رسول باہر نہیں آئے کچھ لوگوں نے نماز کے لئے  شور بھی کیا لیکن الله کے رسول صرف صبح کی نماز کے لئے ہی باہر آئے  جب انہوں نے فجر کے نماز پوری کی پھر لوگوں کی طرف رخ کیا  اور پڑھا "  میں شہادت دیتا ہوں کہ  الله کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمّد الله کے رسول اور بندے ہیں "  آپ لوگوں کی رات کی کوئی بات مجھ سے چھپی نہیں ہے لیکن مجھے اس بات کا ڈر تھا کہ رات کی عبادت آپ پر فرض جیسے نہ طاری ہو جاۓ اور آپ لوگ اس کو نہ کرسکو "

( کتاب نمبر ٤، حدیث نمبر ١٦٦٧ : مسلم شریف)

·       حضرت عائشہ (رضی الله و تعالہ عنہا ) نے فرمایا کہ الله کے رسول ایک رات میں مسجد میں نماز ادا کی اور کچھ لوگوں نے ان کے پیچھے نماز ادا کی – دوسری رات میں بھی انہوں نے نماز ادا کی اور اس رات کچھ اور لوگ نماز میں شامل ہوئے – تیسری یا چوتھی رات میں لوگ کافی تعداد میں مسجد میں جمع ہوئے لیکن الله کے رسول باہر تشریف نہیں لائے – صبح میں الله کے نبی نے فرمایا "  کہ مجھے جس بات نے باہر آنے سے  روکا وہ تھا ڈر ، اس بات کا کہ یہ عبادت آپ پر فرض نہ بن جاۓ  " یہ ماہ رمضان میں ہوا .

( حدیث نمبر ٦.١.١  ملک موتا کی حدیث کی کتاب )

تبصرہ

 

اوپر لکھی گئی احادیث سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ نماز  ماہ رمضان کی عبادت کا ایک حصّہ ہے اور رمضان میں تراویح کے نماز بھی قدرتی طور سے رمضان کی عبادت ہے یہ بات بھی صاف ہے کہ جو شخص بھی اعتقاد سے رمضان میں عبادت کریگا وہ یقینن انعام کا حقدار ہوگا  یہ بہت اہم ہے کہ ہم تراویح پڑھنے میں کسی قسم کے تنازعات میں نہ پڑھیں نہ اس بات کی جددو جہد کریں کہ  تراویح کی  نماز میں کتنی رکعتیں ہیں بس اس بات کا اہتمام کریں کہ ہم کو رمضان کی راتوں میں عبادت کرنا ہے تاکہ رسول کی اطاعت ہو اور ہم الله سے مغفرت اور رحمت کی د عا کریں        

شب قدر یا  لیلتول  قدر  

 سوره نمبر ٩٧، القدر ، آیت نمبر ١ سے ٥

oوَمَا أَدْرَاكَ مَا لَيْلَةُ الْقَدْرِ o إِنَّا أَنزَلْنَاهُ فِي لَيْلَةِالْقَدْرِ

o لَيْلَةُ الْقَدْرِخَيْرٌ مِّنْ أَلْفِ شَهْرٍ

oتَنَزَّلُ الْمَلَائِكَةُ وَالرُّوحُ فِيهَابِإِذْنِ رَبِّهِم مِّن كُلِّ أَمْرٍ

سَلَامٌ هِيَ حَتَّى مَطْلَعِ الْفَجْرِ

 ترجمہ

ہم نے اس (قرآن) کو شب قدر میں نازل کیا  اور تم کیا جانو شب قدر کیا ہے شب قدر ہزار مہینوں سے بہتر ہے فرشتے اور روح (جبریل) اپنے رب کے  اذن  سے ہر حکم لے کر اترتے ہیں اور یہ رات سراسر سلامتی ہے طلوع فجر تک

سوره نمبر ٤٤، اد دخان ، آیت نمبر ٢ سے ٤ تک  

وَالْكِتَابِ الْمُبِينِ

إِنَّا أَنزَلْنَاهُ فِي لَيْلَةٍ مُّبَارَكَةٍ إِنَّا كُنَّا مُنذِرِينَ

فِيهَا يُفْرَقُ كُلُّ أَمْرٍ حَكِيمٍ

ترجمہ

قسم ہے اس کتاب مبین کی کہ ہم نے اسے بڑی خیر و برکت والی رات میں نازل کیا ہے کیونکہ ہم لوگوں کو متنبّہ  کرنے کا ارادہ رکھتےتھے یہ وہ رات تھی جس میں ہر معاملہ کا حکیمانہ فیصلہ ہمارے حکم سے صادر ہوتا ہے   

حدیث

·      حضرت عائشہ (رضی الله تعالہ عنہا ) نے کہا کہ الله کے رسول ماہ رمضان کے آخری دس دنوں میں اعتکاف کیا کرتے تھے اور فرماتے تھے " شب قدر کو رمضان کی آخری دس راتوں میں تلاش کریں "

(جلد نمبر ٣، کتاب نمبر ٣٢، حدیث نمبر ٢٣٧ : صحیح بخاری)

·      حضرت عائشہ (رضی الله تعالہ عنہا ) سے روایت ہے کہ رسول الله (صلی اللہ  علیہ سلم) نے فرمایا " شب قدرکو رمضان ماہ کی آخری دس دنوں میں طاق راتوں میں تلاش کرو "

·      (جلد نمبر ٣، کتاب نمبر ٣٢، حدیث نمبر ٢٣٤  : صحیح بخاری)

 تبصرہ

شب قدر ایک بڑی پاک اور رحمتوں والی رات ہے اس رات میں فرشتے اور حضرت جبریل زمین کے قریب آتے ہیں یہ رات انعام والی رات ہے جو ایک ہزار مہینوں کی عبادت کے برابر ہے اگر کوئی شخص اس رات میں عبادت کرتا ہے تو اسے ٨٣ سال اور ٤ مہ کی عبادت کا ثواب ملتا ہے جو ایک ہزار مہینوں کے برابر ہے اس رات میں قرآن پاک لوح محفوظ  سے زمین پر نازل ہوا

یہ شب رمضان کی آخری راتوں میں ملتی ہے قرآن میں اس رات کی تاریخ نہیں بتائی گئی ؟  تاہم : الله کے رسول نے اس رات کو آخری عشرے میں طاق راتوں میں تلاش کرنے کے لئے کہا ہے یعنی رمضان کے ماہ میں اکیسویں، تیئسویں ، پچیسویں ، ستائسویں اور انتیسویں راتوں میں سے ایک شب قدر ہو سکتی ہے

 اس رات میں عبادت کیسے کریں :

·      شب قدر میں ذہنی طور پر عبادت کے لئے خود کو تیّار کریں

·        عشا کی نماز کے بعد تراویح ادا کریں – اس کے بعد وقفہ سے نفل نمازیں ادا کریں

·      نفل نمازوں کے درمیان قرآن کی تلاوت کرتے رہیں

·      ان عبادتوں کے درمیان ذکر الہی کریں یعنی تسبیح پڑھتے رہیں

·      خاندان کے لوگوں سے زیادہ گفتگو سے پرہیز کریں

رمضان کے ماہ میں عبادت کرنے میں الله ہمیں طاقت، ہمّت اور پاکیزگی عطا کرے تاکہ ہم صدق دل سے عبادت کر سکیں  

 رمضان کے ماہ کی کچھ اہم باتیں

دارلعلوم دیوبند کی معرفت سے

·      روزہ کے دوران اگر کوئی شخص شدید بیمار ہو جاۓ اور ڈاکٹر نے کوئی دوا تجویز کی جو نہایت ضروری ہو تو روزہ توڑ سکتے ہیں اور جب صحت مند ہو جاۓ تو گنتی پوری کر لے

·      روزہ دار اپنے دانت مسواک سے صاف کر سکتا ہے –روزہ کے دوران  ٹوتھ پیسٹ یا ٹوتھ برش سے دانتوں کو صاف نہیں کرنا چاہئے  

   روزہ نہ رکھنے کی صورت میں  فدیہ  

سے بزرگ یا لاچار لوگ جو کسی صورت میں  روزہ نہیں رکھ سکتے اور مالی حالت اچھی ہونے کی صورت میں فدیہ دے سکتے ہیں

ایک روزے کے بدلے میں ایک مسکین کو دو وقت کا کھانا  یا آدھا سا 'یعنی پونے دو کلو گیہوں یا اس کے قیمت کسی مسکین کو دے دے

صدقہ فطر کیا ہے

فطرہ دینا ہر مسلمان بالغ یا کم سن مرد یا عورت پر واجب ہے – حضرت ابن عمر سے روایت ہے کہ الله کے رسول نے فرمایا  کے صدقہ فطر ہر مسلمان پر واجب ہے جو صاحب حیثیت ہو – جو خاندان کا مکھیا ہو وہ ہر خاندان کے فرد کے لئے فطرہ ادا کرے  یہ ضروری ہے کہ صدقہ فطر خود کے لئے  خود کی بیوی، بچے،  بزرگ  والدین اگر ساتھ رہتے ہیں تو سب کے لئے ادا کرنا ہے یہ فطرہ سال میں ایک بار ادا کرنا ہے یہ پونے دو کلو گیہوں یا اس کی قیمت کسی مسکین یا غریب کو دیا جاۓ – الله کے رسول کا فرمان ہے کہ صدقہ فطر رمضان میں عید کی نماز ادا کرنے سے پہلے دینا چاہیے فطرہ کی رقم مسجد بنانے کے لئے نہیں دینا چاہیے    

 عاشورہ کے دن (محرم کی ١٠ تاریخ ) کا روزہ

الله کے رسول جب مکہ میں تھے تو ان کو یہ معلوم تھا کے اہل قریش عاشورہ کے دن کا روزاس رکھا کرتے تھے یہ روزہ الله کے رسول نے بھی رکھا ہے اس روزہ کو رکھنے سے پچھلے سال کے گناہ معاف ہو جاتے ہیں الله کے رسول جب ٦٢٢ عیسوی میں مدینہ پہنچے تو ان کو پتہ چلا کہ اس دن یہودی بھی روزہ رکھتے ہیں پوچھنے پر معلوم ہوا کہ یہودی اسلئے روزہ رکھتے ہے کیونکہ اس دن ان کی قوم کو فرون سے نجات ملی تھی اور شکر ادا کرنے کے لئے حضرت موسی نے روزہ رکھا تھا الله کے رسول نے فرمایا کہ ہم حضرت موسی سے زیادہ قریب ہیں لہٰذا انہوں نے روزہ رکھا اور مسلمانوں کو بھی  روزہ رکھنے کی تاکید کی – الله کے رسول نے یہ بھی کہا انشااللہ اگلے سال ہم ٩ اور ١٠ محرم کو روزہ رکھے گیں چونکہ یہ الله کے رسول کی خواہش تھی اسلئے مسلمان دو دن روزہ رکھتے ہیں یہ نفل روزے ہیں کیونکہ ایک سال بعد رمضان کے روزے فرض ہو گئے تھے

حدیث

·     حضرت عائشہ (رضی الله و تعالہ عنہا ) نے بتایا  کہ اسلام کے آنے سے پہلے  قریش عاشورہ کے دن کا روزہ  رکھا کرتے تھے اور الله کے رسول نے بھی یہ روزہ رکھا ہے جب الله کے رسول مدینہ ہجرت کر گئے انہوں نے یہ روزہ رکھا اور صحابہ سے بھی یہ روزہ رکھنے کے لئے کہا  لیکن جب رمضان کے روزے فرض ہو گئے تو الله کے نبی نے فرمایا جو عاشورہ کا روزہ رکھنا چاہے رکھے اور جو نہ رکھنا چاہے نہ رکھے

 ( کتاب  نمبر ٦، حدیث نمبر ٢٤٩٩، صحیح مسلم )

·     حضرت عائشہ (رضی الله و تعالہ عنہا ) نے بتایا  کہ اسلام کے آنے سے پہلے  قریش عاشورہ کے دن کا روزہ  رکھا کرتے تھے الله کے رسول نے مسلمانوں سے یہ روزہ رکھنے کے لئے کہا لیکن بعد میں رمضان کے روزے فرض ہونے پر الله کے نبی نے فرمایا جو عاشورہ کا روزہ رکھنا چاہے رکھے اور جو نہ رکھنا چاہے نہ رکھے

(کتاب نمبر ٣١، حدیث نمبر ١١٧، صحیح بخاری)  


If you have any feedback please revert to:  arifrk43@gmail.com

Comments